فتاویٰ جات
فتویٰ نمبر : 13459
دو سجدوں کے درمیان رفع سبابہ
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 22 October 2014 01:55 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

مابین السجود اشارہ  بالسبابہ  کا ثبوت صحیح احادیث سے ہے یا نہیں ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

جو لوگ  مابین السجود ، اشارہ  بالسبابہ  کے قائل ہیں  ان کی میرے علم  کے مطابق دو ہی دلیلیں  ہیں:

كان رسول الله صلي الله عله وسلم  اذا قعد في الصلوة  جعل  قدمه  اليسري  بين فخذوه  وساقه  وفرش  قدمه  اليمني ّووضع يده  اليسري  رلي  ركبته اليسري  ووضع يده  اليمني  علي  فخذوه  اليمني  واشار  باصبعه ّ

رسول اللہ ﷺ!جب  نماز  میں ( تشہد ) بیٹھتے  تو اپنا  بایاں  پاؤں اپنی ران  اور پنڈلی  کے درمیان  کرلیتے  اور اپنا  دایاں  پاؤں  بچھا لیتے ۔اپنا بایاں  ہاتھ گھٹنے  پر اور  دایاں  ہاتھ ران  پر رکھ دیتے  تھے اور اپنی انگلی ( رفع سبابہ ) سے اشارہ کرتے تھے ( صحیح مسلم :579، وترقیم  دارالسلام :1307)

ان النبي صلي الله عليه وسلم  كان  اذا جلس في الصلوة  وضع  يديه  علي ركبتيه  ورفع اصبعه  اليمني  التي  تلي  الابهام  فدعا بها۔۔۔الخ  نبی ﷺ جب نماز میں (تشہد ) بیٹھتے تو اپنے ہاتھ گھٹنوں  پر رکھتے  اور دائیں  ہاتھ کی انگلی (رفع سبابہ)  اٹھاتے  جو انگوٹھے  سے  ملی ہوئی ہے ۔پھر اس کے ساتھ  دعا بھی کرتے  ۔(صحیح مسلم:114/580 وترقیم دارالسلام  :1309)

استدلال" كان اذا  قعد (جلس) في الصلوة  " جب  آپﷺ نماز میں بیٹھ جاتے "سے ہے ۔ فی الصلوۃ  کے الفاظ  عام ہیں   جو تشہد  اور جلوس  بین السجدتین  دونوں پر مشتمل  ہیں ۔

یہ استدلال صحیح  نہیں ہے،پہلی  روایت صحیح مسلم  میں عثمان  بن حکیم  عن عامر  بن عبداللہ بنا لزبیر  عن ابیہ  اور دوسری روایت  محمد  بن  عجلان  عن عامر بن عبداللہ  عن ابیہ  کی سند سے موجود ہے  اور یہی  روایت  سن  نسائی  (باب  موضع  البصر عند الاشارہ  تحریک  السبابۃ ج  3ص39 ح1276، تعلیقات  سلفیہ ) میں ابن عجلان  عن عامر  بن عبداللہ عن ابیہ  کی سند سے درج  ذیل  متن کے ساتھ موجود ہے :"ان رسول الله صلي الله عليه وسلم  كان اذا قعد  في التشهد وضع لفه اليسري ۔۔۔الؒ"

روایت  ثانیہ صحیح مسلم  میں ہی درج  ذیل الفاظ موجود ہے :

كان اذا قعد  في التشهد وضع یدہ الیسری  علی رکبتہ  الیسری ۔الخ

(ح  115/580 دارالسلام :1310)

 معلوم ہوا کہ  یہاں فی الصلوۃ  سے مراد  فی التشہد  ہے ،  والحديث   يفسربعضه  بعضاً۔

 یہی جواب  اس باب  کی باقی  عام روایات کا ہے  کہ وہ تشہد پر محمول  ہیں۔

1)     عبدالرزاق  اخبرنا  سفیان  عن عاصم  بن کلیب  عن ابیہ  عن وائل  بن حجر  قال :رایت  النبی صلی اللہ علیہ وسلمـــــوسجد فوضع یدیہ  حذوا اذنیه  ثم جلس فافترش  رجله اليسري  ثموضع يده اليسري  علي ركبته  اليسري  ووضع ذراعه اليمني  علي فخذوه اليمني  ثم اشار بسبابته  ___ ثم سجد فكانت  يداه  حذاء اذنيه ّ( مسند احمد 4/317ح 18858، والفظ لہ ، عبدالرزاق فی امصنف  2/68 ح  2522و2الطبرانی فی الکبیر 22/34، 35 ح81)

اس روایت  میں دو سجدوں  کے درمیان  اشارہ  کرنے  کی صراحت  ہے لیکن  بلحاظ  سندیہ  روایت ضعیف ہے ۔اس کے راوی  سفیان  الثوری  مشہور مدلسین  میں سے تھے ۔ دیکھئے  میری  کتاب نو رالعینین (ص 100/103، طبع جدید ص 138۔ 139 )  عمدۃ القاری  للعینی  (ج 3 ص112 الجواہر  النقی (8/262) اور  ارشاد الساری  للقسطلانی (1/286) وغیرہ

 غیر صحیحین  میں مدلس کی عدم تصریح  سماع اور عدم  متابعت معتبرہ والی   روایت  ضعیف ہوتی ہے۔ ۔

 بعض محققن نے اس روایت کو محدث عبدالرزاق ( ثقہ حافظ ) کے  تفرو کی وجہ سے  شاذ  قراردیا ہے ۔ (دیکھئے تمام النسۃ ص216)

 حالانکہ یہ جرح اصول  حدیث  کی رو سے  بلکہ ہر لحاظ  سے غلط  و مردود ہے۔ وجہ  ضعف  صرف  عنعنہ  سفیان  ثوری ہے ۔ واضح رہے  کہ  عبدالرزاق کا تفرد ییاں  چنداں  مضر نہیں ۔ دوسرے  اگر ایک  ہزار راوی  ایک  زیادت  سند یا متن  میں ذکر نہ کریں  اور ایک  ثقہ  ذکر  کرے  تو عدم  ذکر  سے  زیادت   ذکر  والی روایت  معلوم نہیں ہوتی الا یہ کہ کسی راوی  کے وہم  پر محدثین  کا اجماع ہو یا جمہور محدثین  نے اس کی  روایت  کو معلول  قرار دیا ہو' یہ دونوں  باتیں یہاں مفقود  ہیں ' مختصر یہ کہ  سفیان  ثوری  کی منعن  روایت  عدم  تصریح  سماع کی وجہ  سے ضعیف ومردود ہے ۔اس تفصیل  سے معلوم  ہوا کہ  دونوں  سجدوں  کے درمیان  اشارہ  سبابہ  کرنا ہی راجح ہے ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ علمیہ (توضیح الاحکام)

ج1ص382

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)