فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 13133
(334) 22رجب کے کونڈوں کی ایجاد کی تاریخ
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 31 August 2014 02:43 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

22رجب کو بعض لو گ  کو نڈے  دیتے ہیں  یہ کب  اور کس  تا ر یخ  سے ایجا د  ہو ئے اس کی اصل کیا ہے نیز  ان کا شرعاً کیا حکم ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

22رجب  کے کو نڈوں  کے سلسلے  میں ایک جعلی  فر ضی  اور بے بنیاد  حکا یت  بیان  کی جا تی ہے  جس  کو منشی  جمیل احمد  نے اپنے  منظوم  کلا م  میں بڑے  مزے  لے  کر بیان  کیا ہے کہ مدینہ  میں ایک  لکڑہا رے  کو فقرو فا قہ ۔نے آگھیر ا۔ اور وہ گھر با ر  کو خیر با د  کہہ  کر مارے مصیبت  کے بارہ سال  تک  دردر کی ٹھو کر یں  کھا تا رہا  ۔دوسری  طرف اس کی بیوی  نے مدینے  میں ایک وزیر  کے محل  میں ملا زمت  اختیا ر  کر لی  ایک روز  یہاں  محل  کے سامنے  سے حضرت جعفر  صا دق کا اپنے  مصا حبوں  کے ہمرا ہ گزر  ہوا ۔ اس وقت  یہ عورت  جھا ڑو  دے  رہی  تھی دریا فت  فر ماتے  ہیں آج  کو نسی  تا ر یخ  ہے عرض  کیا جا تا ہے کہ  رجب  کی با ئیسویں  تا ریخ  ہے  فرما یا اگر  کسی  حا جت  مند  کی حا جت  پو ری  نہ ہو تی  ہو مشکل  میں پھنسا  ہوا  ہو  مشکل  کشا ئی نہیں ہو رہی  تو اس کو  چا ہیے  کہ نئے  کو نڈے  لا ئے  اور  ان  میں  پو ریا ں  بھر  کر میر ی  فا تحہ  پڑھے  پھر  میر ے وسیلے  سے دعا مانگے  اگر اس کی حا جت  روا ئی اور مشکل  کشا ئی  نہ ہو ئی  تو وہ  قیا مت  کے روز  میرا  دا من پکڑ سکتا ہے  مذکورہ عورت  نے اس ورد  کے مطابق  عمل  کیا اس کے نتیجہ  میں خا وند  ایک مد فو ن  خزانہ  لے کر واپس  آگیا  فقرو فاقہ  کے دن  امیر انہ ٹھا ٹھ  با ٹھ  میں بد ل  گئے  ہما رے  معزز  و مکرم  دوست مولا نا  فضل الر حمن اپنے کتا بچہ "رجب  کے  کو نڈے"میں تفصیلی  کہا نی کے اختتا م  پر رقمطراز  ہیں ۔

" یہ من گھڑت  قصہ  ہے کہ اس کی کو ئی  سند  نہیں  کسی  بھی مستند کتا ب  میں یہ منقو ل   نہیں  اس  کے جھوٹے  ہو نے  کی سب  سے بڑی دلیل یہ ہے کہ مدینہ  طیبہ میں نہ کبھی  کو ئی با د شا ہ  ہوا  اور نہ  ہی کو ئی وزیر  حضرت صادق  کی پیدائش  ایک روایت  کے مطابق 8رمضا ن 80ھ میں ہوئی   اور  دوسری  کے مطا بق  7ربیع  الاول 83ھ میں ہو ئی ان کی وفا ت  پر اتفا ق  ہے کہ 15شوال 148ھ  میں ہو ئی  ان کی عمر  عزیز کے تقر بیاً 52سال خلفا ئے   بنی امیہ  کے عہد  میں گزرے جن کا  دارالخلافہ  دمشق  تھا  با قی  سال بنو عبا س کے دور خلافت  میں گزر ے جنہوں نے بغداد  کو اپنا دارالخلافہ بنا لیا تھا معلو م ہوا کہ 22رجب (جعفر صادق کا یو م پیدا ئش ہے  اور نہ ہی یو م وفا ت )درحقیقت  اہل تشیع  کے ہاں  اس دن  کا تب  وحی  اور ام المومنین  ام حبیبہ  رضی اللہ تعالیٰ عنہا کے بھا ئی  حضرت  امیر معاویہ  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  کی وفات  پر خوشی  منا ئی  جا تی  ہے  جب اہل سنت والجماعت  تک بات  پہنچی  تو اس کو داستا ن  عجیب  کے ذریعہ  ایک نئی  صورت دے دی  گئی ۔(ص 13۔14)

مز ید آنکہ حضرت جعفر کی طرف منسو ب  عبا رت  شر کیات  سے پرہے  جس سے  وہ کو سوں دور تھے  قرآن  نے شہا دت  دی  ہے  کہ اللہ  کے سوا  کو ئی فر یا د رس نہیں ہے :

﴿أَمَّن يُجيبُ المُضطَرَّ‌ إِذا دَعاهُ وَيَكشِفُ السّوءَ...﴿٦٢﴾... سورة النمل

"کو ن ہے جو مجبو ر  کی پکا ر سنتا ہے جب  وہ اسے  پکا رتا  ہے اور  تکلیف  کو دورکرتا  ہے ۔" اور نفع و نقصان  کا ما لک  وہی  مختا ر  کل ہے قرآن  میں سورۃ یو نس ،الاعراف ،الانعام ،الانفطار، المو من وغیرہ  کی متعدد آیا ت میں اس با ت کی صرا حت  مو جو د ہے ۔ «ماشاء الله كان وما لم يشا لم يكن»اور وسیلہ  بذات  المخلو ق  کفا ر  مکہ  کا عقیدہ  تھا  جس  کی سورۃ  الا نعا م  اور سورۃ یو نس  میں واضح  الفا ظ  میں تر دید  کی گئی ہے یہ شواہد  ہیں کہ حضرت  جعفر صادق  جیسی عظیم  ہستی  مجسمہ  تعلیما ت  کتا ب  و سنت  اس کے  منا فی  حکم  صادر نہیں  کر سکتے  لہذا  ان کی طرف  منسوب  حکایت  جھوٹی ہے۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص615

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)