فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 13118
(319) سوگ کے تین دنوں میں ہاتھ اٹھا کر دعا مانگنا
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 31 August 2014 01:21 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کسی  بھی  آدمی  کے فو ت  ہو جا نے  پر تین  دن  تک افسوس  کے لیے  بیٹھا  جا تا ہے  اگر کو ئی  آدمی  وہاں  آکر دعا  ما نگنے  کو کہتا  ہے اور ہا تھ  اٹھا  کر  جو دعا  ما نگی  جا تی  ہے اس با رے  میں رسول اکر م  صلی اللہ علیہ وسلم   کا طریقہ  کا ر  بتائیں  ۔کیا  ہا تھ اٹھا  کر دعا  جا ئز  ہے  یا نہیں ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

فو ت  شدہ  آدمی  کی پس  ما ند گا ن  سے تعز یت  کر نا مسنو ن  و مستحب  ہے لیکن  اس  امر  کے لیے  حقہ  لگا  کر  بیٹھے  رہنے  کا کو ئی  ثبو ت نہیں ہے  بلکہ حدیث  جریر بن  عبد اللہ  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   میں اہل میت  کے ہاں  اجتما ع  کو نو حہ  قرار  دیا گیا  ہے۔

« كنا نعد الاجتماع الي اهل الميت وصنعة الطعام بعد دفينه من النياحة »عن جرير بن عبد الله البحلي قال: كنانري الاجتماع الي اهل الميت وصنعة الطعام من النياحة صححه الامام البوصيري علي شرط البخاري ... ومسلم مصباح الزجاجة (١/٥٣٥) فقہ  حنفی کی مشہور کتاب فتح القدیر (2/151) میں ہے'' ھی بدعة قبيحة ’’ ومال اليه النووي في شرح المنهاج (٥/٢٩-) ط مكتبة الارشاد مكة

علا مہ  شو کا نی  رحمۃ اللہ علیہ   فر ما تے  ہیں کہ  حدیث  جریر :

’’اخرجه ايضاابن ماجه واسناده صحيح(نيل الاوطار:٤/104)

بسلسلہ  دعا  مو لا نا  محمد  اسما عیل  سلفی  رقمطراز  ہیں ؛" مو ت  کے بعد میت  کے لیے دعا  اور صدقہ  یقیناً مفید  ہیں  جنا زہ   خو د میت  کے لیے  دعا ہے لیکن  صدقہ  اور دعا  کے لیے  کسی وقت  کا تعین  شر عاً ثا بت  نہیں  مو ت  کے بعد  میت  کے گھر  بیٹھ  کر عمو ماً دعاؤں  کا تا نتا بند ھ جا تا ہے  ہر آنے  والا  دعا  کے لیے  اس اندا ز  سے درخوا ست  کر تا  ہے  گو یا وہ  اپنی حا ضری  نو ٹ  کرا  رہا  ہے ایک سیکنڈ  میں  دعا ختم  ہو جا تی  ہے  اور حقہ  اور گپوں  کا ورد  شروع  ہو جا تا ہے  اور دعا کے وقت  بھی دل  حا ضر  نہیں ہو تا  حا لا نکہ  دل  کی تو جہ  دعا کے لیے  از بس  ضروری  ہے ۔

«لا يقبل الله من قلب لاه »صححه الباني «واعلموا ان الله لا يستجيب دعاء من قلب غافل لاه» صحيح ترمذي ابواب الدعوات رقم الباب (٦٦) ح (٣٧٢٥) الصححية (٥٩٤)

''اللہ  غا فل  دل  کی دعا قبو ل  نہیں کرتا۔''

میت  کے لیے  دعا ہر  وقت  بلا  تخصیص  کی جا سکتی ہے  اور زندوں  کی طرف  سے یہی  بہترین  صلہ  ہے جو میت  کو دیا  جا تا ہے  بشر طیکہ  سنت  کے مطا بق  ہو تعز یعت  کا مطلب  گھر  والوں  کی تسکین  ہے دعا  اگر مجلس  کی  بجا ئے  انفرادی طور پر کی جا ئے  تو دعا  کا مقصد  پو را  ہو سکتا  ہے غرض  یہ تین  دن  کا جلسہ  دعا ئیہ سنت  سے  ثابت  نہیں  ان مجا لس  میں حقہ  اور بھی  ان  کے مقصد  کو بر با د  کر دیتا  ہے (الاعتصا م "گو جرا نوا لہ 28دسمبر1951ء)

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص604

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)