فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 13113
(314) میت کے گھر میں ٹینٹ لگوانا
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 31 August 2014 12:56 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

مر دے  کی تجہیز  و تکفین  کے   بعد   میت  والے  گھر  میں  جو ٹینٹ  وغیرہ  لگا تے  ہیں  اور پھر  و ہاں پر  مو جو د  لو گو ں  کو کھا نا  وغیرہ  ملتا  ہے کیا  اس کا قرآن  و حدیث  سے کو ئی  ثبو ت  مو جو د  ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

مر دے  کی تجہیز  و تکفین  کے بعد  اہل  میت  کے ہا ں  اجتما ع  کا شرع  میں کو ئی  ثبو ت  نہیں  بلکہ  حدیث  جر یر  میں اس کو نو حہ  کی  قبیل  سے شمار  کیا گیا ۔عن جرير بن عبد الله البحلي قال: كنانري الاجتماع الي اهل الميت وصنعة الطعام من النياحة صححه الامام البوصيري علي شرط البخاري ... ومسلم مصباح الزجاجة (١/٥٣٥) فقہ  حنفی کی مشہور کتاب فتح القدیر (2/151) میں ہے'' ھی بدعة قبيحة ’’ ومال اليه النووي في شرح المنهاج (٥/٢٩-) ط مكتبة الارشاد مكة .

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص602

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)