فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 13111
(312) میلاد کی شرعی حیثیت
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 31 August 2014 12:50 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیا فر ما تے  ہیں علما ئے دین  و شرع  متین  اس با رے  میں  کہ ایک شخص  نے مندر جہ ذیل  با تیں  ایک اخبا ر  میں شا ئع  کی ہیں  پو چھنا  یہ ہے  کہ با ت  خلفا ئے  را شدین  رضوان اللہ عنھم اجمعین  سے  کسی  مستند  کتا ب   میں  ثا بت  ہے  یا  یہ  لوگو ں  کا افترا ء  ہے ؟ لکھتے ہیں ؟

٭میلا د  کے سلسلے  میں حضرت  ابو بکر  صدیق  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   نے فر ما یا  کہ :"  جس  نے  نبی اکر م   صلی اللہ علیہ وسلم   کے میلا د  پا ک  پر  ایک  در ہم  بھی  خر چ کیا  وہ جنت  میں   میر ے  ساتھ  ہو گا ۔"

٭حضرت  عمر فا رو ق  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   نے فر ما یا :"  جس  نے امام  الا انبیا ء  صلی اللہ علیہ وسلم  کے میلا د  مبا رک  کی تعظیم  کی اس  نے اسلا م  کو زندہ  کیا ۔

٭خلیفہ  سو م  دا ما د رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  ذوالنو ر  ین  حضرت عثما ن  غنی  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   نے فر ما یا  کہ : " جس  نے  سید الانبیا ء  صلی اللہ علیہ وسلم  کے میلا د  مبا رک  پر ایک  در ہم  بھی  خرچ  کیا  گو یا  کہ وہ  بدرو حنین  کے جہا د  میں شر یک  ہوا ۔

٭دا ما د رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   شیر خدا  مشکل  کشا  حضرت  علی  رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے فر ما یا :"  جس نے  رسول  کر یم  صلی اللہ علیہ وسلم  کے ۔میلا د  پا ک  کی تعظیم  کی  اور اسے  بیان  کی کو شش کی وہ  دنیا  سے  ایما ن  کے ساتھ  جا ئے گا  اور بغیر  حسا ب  کے  جنت  میں داخل  ہو گا ۔

آگے  لکھتے  ہیں کہ حضرت عبد المطلب  فر ما تے ہیں  کہ :" میں امام  الا نبیاء  کی ولا دت  کی رات خا نہ  کعبہ  کا طواف  کر رہا  تھا  میں نے دیکھا  کہ خا نہ  کعبہ  سجدہ  میں گر  گیا  اور کعبہ  سے آواز  آئی  کہ آمنہ  کے یہا ں  حضرت  محمد  صلی اللہ علیہ وسلم  پیدا ہو گئے  ہیں  اور کعبہ  کے اندر  ہبل  نا می  بڑا بت تھا  اس کے اندر  سے آواز  آئی  کہ خبر  دار آخری  نبی  پیدا ہو گیا  ہے حضرت  عبدالمطلب  یہ آوازیں  سن  کر خوشی خوشی  آمنہ کے گھر  پہنچے  اور اندر  جانے لگے  تو ایک  آدمی  تلوا ر  لیے  ظا ہر ہوا  اور پکا را جب  تک  تما م  فرشتے  محمد  صلی اللہ علیہ وسلم  کی زیا رت  نہ کر لیں  نہ کو ئی  اند ر  جا سکتا ہے اور نہ کو ئی اسے دیکھ  سکتا ہے ۔۔(جنگ  اخبا ر 12/3/1418ھ)


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

بسلسلہ  میلا د   رو ز نا مہ  جنگ  میں شا ئع  شدہ  خلفا ئے  راشدین  رضوان اللہ عنھم اجمعین وغیرہ  کی  طرف  منسو ب  مذکو رہ  بالا  بیا نا ت  محض  افترا ء  آت  ہیں  تاریخی  مستند  حوا لو ں  سے  قطعاً ثا بت  نہیں ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص601

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)