فتاویٰ جات: تعلیم وتعلم
فتویٰ نمبر : 13098
(299) بچے کا نام رکھنے میں کن باتوں کا خیال رکھنا چاہیے
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 31 August 2014 10:26 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

بچے  کا نا م  رکھنے  میں کن  با توں  کا خیا ل  ضروری ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

بچے  کا نا م  محبو ب  تر ین  رکھنا  چا ہیے  صحیح  مسلم  میں حدیث  ہے ۔

«ان احب اسمائكم الي الله عبد الله وعبد الرحمٰن»(1) 

"تمہا رے  نا مو ں  میں سے  سب  سے محبو ب  تر ین  نا م اللہ  کے ہاں  عبداللہ  اور الر حمٰن  ہیں ۔"

 اسی  طرح  وہ نا م جس  میں عبو دیت  کا اظہا ر  ہو مثلاً عبد الر حیم  عبدالملک  اور عبد الصمد  وغیر ہ  پھر  انبیاء  علیہ السلام   اور  نیک  لو گو ں  کے نا مو ں  کو اختیا ر  کر نا چا ہیے  صحیح  مسلم  میں حدیث ہے ۔

«انهم كانوا يسمون باسماء انبيائهم والصالحين قبلهم»(2) 

اور سنن ابو داؤد  میں ہے ۔

«تسموا باسماء الانبياء واحب الاسماء الي الله عبد الله وعبدالرحمٰن واصدقها حارث وهمام واقبحها حرب ومرة»(3) (باب في تغيير الاسماء )

یعنی " انبیاء  علیہ السلام   کے نا مو ں  پر نا م  رکھو  اللہ  کے ہاں  سب سے  محبوب  ترین  نا م عبد اللہ اور عبد الرحمٰن  اور سب  سے  سچا یعنی  واقعہ کے مطا بق  حا رث  اور  ہما م  ہے ۔( کیو نکہ   ہر آدمی دنیا  یا آخرت  کی کھیتی  میں لگا ہے اسی طرح  تفکرا ت  بھی انسا نی  زند گی  کا لا حقہ  ہیں )  اور سب  سے برا  نام  حر ب  (لڑا ئی ) اور مرۃ (کڑواپن  )ہے ۔"

نام  کا اثر آدمی  کی شخصیت  پر بہت  زیادہ پڑتا ہے  اس سلسلہ  میں تفصیلی  بحث  کے لیے ملا حظہ  ہو ۔(زاد المعا د 2/5فصل  فی  فقہ ہذا الباب )

(اور بر ے  نا م  سے اجتنا ب  کر نا ضروری  ہے اور یسا  نا م  بھی  نہیں  رکھنا چا ہیے  جس میں  تزکیہ نفس پا یا جا ئے  اور ایسا  نا م  بھی  نہیں  رکھنا  چا ہیے  جس میں  سب  و شتم  کا مفہو م  ہو وغیرہ  وغیرہ )(فتح البا ری 10/575)


 

1۔ سحيح مسلم كتاب الادب باب النهي عن التكني بابي القاسم (٥٥٨٦)-(٥٥٩٧)

2۔ صحيح مسلم كتاب الادب باب النهي ...وبيان مايستحب من الاسماء (٥٥٩٨)

3۔ ابو دائود كتاب الادب باب في تغير الاسماء (4950) ضعفه الالباني وانظر :الارواء (٤/٤-٨) رقم (١١٧٨) فيه عقيل بن شبيب وقال الذهبي : لايعرف وقال الحافظ" مجھول''

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص591

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)