فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 13008
(209) غیر مسلم کی فوتگی پر ’انا للہ‘ پڑھنا
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 25 August 2014 09:52 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

راجیو گاندھی کے قتل  کی خبر  سن کر ایک  تعلیم  یا فتہ شخص  کے منہ سےبے ساختہ"انا للہ وانا  الیہ  را جعون " نکلا  خبر  سنانے  والے  نے اعتراض کیا  کسی  غیر مسلم  کی مو ت پر  یہ قرآنی  جملہ  نہیں پڑھنا  چا ہیے ۔ محلے  کے خطیب سے یہ مسئلہ  دریافت  کیا گیا  تو انہوں  نے فر ما یا کہ ایسا  کر نے میں کو ئی  حر ج نہیں  لیکن  میر ی  تسلی نہیں ہو ئی  کیو ں  کہ قرآن  پا ک  میں جہاں  یہ جملہ آیا ہے  اس کے سیا ق  و سبا ق  میں صا برو ں  اور ہدا یت  یا فتہ  لو گو ں  کا ذکر  ہے ظا ہر  ہے کہ  صبر اور ہدایت  یا فتگی  ایک مسلم  ہی کا اشعا ر  ہو سکتا ہے  بہر حا ل  آپ  جوا ب  دیتے  وقت  صرف   منطقی  اور قرآنی  دلا ئل  ہی نہ  دیں  بلکہ  یہ بھی  فر ما ئیں  کہ ہمار ے  ہا دہ  بر حق  صلی اللہ علیہ وسلم  اور دیگر اسلاف گرا می  کی اس سلسلے  میں کیا  روش تھی ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

ایک کا فر  مشر ک  کی مو ت  پر " انا لله وانا اليه راجعون یا افسوس  کا اظہا ر نہیں ہو نا  چا ہیے  تھا  سبقت  لسا نی  سے خطا ہو  گئی  ہے تو  استغفراللہ "پڑھنا  چا ہیے  محلہ  کے خطیب  صا حب  سے سہو  ہوا  ہے قرآن  مجید  نے فرعون  اور اس کی قو م  کی  ہلا کت  کا تنا ظر  بیان فر ما یا ہے :

﴿فَما بَكَت عَلَيهِمُ السَّماءُ وَالأَر‌ضُ وَما كانوا مُنظَر‌ينَ ﴿٢٩﴾... سورة الدخان

"پھر  ان  پر نہ  تو آسمان  اور زمین  کو رونا  آیا  اور نہ ان کو مہلت  ہی  دی گئی "پھر  مو من  کے لیے  لا ئق  ہے کہ  کا فر کی مو ت  پر افسوس  کا اظہار  کرے  : ہر گز  نہیں ۔

اور حضرت عبد اللہ  بن  عبا س  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  سے مرو ی ہے  کہ انہوں  نے فر ما یا :

(( قال ابو لهب (عليه لعنة الله) للنبي صلي الله عليه وسلم :تبالك سائر اليوم فنزلت : (تَبَّتْ يَدَا أَبِي لَهَبٍ وَتَبَّ)

یعنی"  ابو لہب  نے ( اس پر اللہ کی لعنت  ہو ) نبی صلی اللہ علیہ وسلم   کو کہا تھا :

’’تبالك سائر اليوم’’ (بخاری باب شرارالموتیٰ)صحيح البخاري كتاب الجنائز باب زكر شرار الموتي (١٣٩٤)

اس سے معلوم  ہوا  کہ کا فر  کے  فقدان پر افسوس  کی بجا ئے  اظہا ر  ناراضی  ہو نا چا ہیے ۔دوسری  روایت  میں ہے حضرت علی  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  نے کہا  میں  نے نبی  صلی اللہ علیہ وسلم  سے عرض  کی : آپ  کا گمرا ہ چچا ابو طا لب  مر گیا ۔ فر ما یا : جا  اسے دفن  کر دے کو ئی  نیا  کا م  مت کر نا  حتی کہ تو  میر ے  پا س آئے  پس  میں گیا  اس کو دفن  کر کے  واپس  آیا تو آپ  صلی اللہ علیہ وسلم  نے مجھے  غسل کا حکم  دیا  اور میر ے  لیے  دعا  کی ۔( صححه الباني صحيح ابي دائود باب الرجل يموت له قرابة مشرك(٣٢١٤) للباني والنسائي كتاب الطهارة باب الغسل من موالاة مشرك(١٨٤) والجنائز (١٨٩٥)(باب الر جا ل  یمو ت  لہ  قرا بۃ مشرک  سنن ابی  داؤد)

اگر  کا فر  کی مو ت  پر اظہا ر  افسوس  روا  ہو تا  تو رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  خواہ ادنی  سے ادنی  الفاظ  میں کر تے  یہا ں  ضرور کر تے  کیو نکہ  ابو طا لب  نے دنیا وی زندگی  میں رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  کا بھر پو ر  ساتھ  دیا تھا  ابو طا لب  ہی  نے  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کو کہا تھا :

فاصدع بامرك ماعليك غضاضة    حتي اوسد في التراب دفينا (ابن هشام (١/٢٦٥)٢٦٦) بحواله الرحيق المختوم ص١٣٩)

یعنی"  جب تک قبر  کی مٹی  میرا  تکیہ  نہیں  بن جا تی  لو گو ں  تک  اپنا پیغا م  دل کھول  کر پہنچا دیجیے ۔ اس وقت کلمہ  خیر  کے نطق  سے رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کی مکمل  خا مو شی  عدم  جوا ز  کی دلیل  ہے ۔(واللہ ولی  التوفیق )

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص511

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)