فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 13000
(201) تنظیم سازی کی شرعی حیثیت
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 24 August 2014 11:53 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

تنظیم  سا ز ی  کی شرعی  حیثیت  کیا ہے ؟ تنظیم  سا زی  کر نا  عین  اسلام  کی خدمت  ہے یا  گنا ہ  کبیرہ؟  یا بدعت  ہے ؟  واضح  رہے  کہ ایک   ہی  عقیدہ  و  نظر  یہ کے  حا مل  قرآن  و سنت  کے   پیرو کا روں  نے مختلف  نامو ں  سے  بے شما ر  تنظیمیں  بنا ڈا لی  ہیں  اور وہ  سر گر م  عمل ہیں لیکن  متحد  نہیں  اور ایک  امیر  نہیں  بلکہ ایک  دوسرے  کی مخا  لفت  کر تے  ہیں  الغرض  آج  کل  تنظیم  ہی کو معیا ر  حب و  بغض  تصور  کر لیا  گیا  ہے ۔

اب  اس صورت  حا ل  میں ایک  عا م مسلما ن  کا کیا  رویہ  ہو نا چا ہیے ؟نیز شر عی  خلا فت  اور  اما رت  کی غیر  مو جو د گی  میں ایک  مسلما ن  اپنی  زند گی  کس  طرح  بسر  کر ے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

امام  وقت  اگر  محسوس  کر ے  تو تنظیم  سا ز ی " کا جوا ز ہے  "صحیح بخا ری" میں حدیث  ہے :

«اكتبوا لي من تلفظ بالاسلام من الناس»صحیح البخاری کتاب الجهاد باب كتابة الامام الناس (3060) باب كتابة الامام الناس)

یعنی " مجھے  ان لو گو ں  کے نا م  لکھ  کر دو  جو  مسلما ن  ہو چکے  ہیں ۔

لیکن  یہ "تنظیم سا زی"  کفر  کے مقا بلے  میں ہے  آپس  میں نہیں  ہم  مسلک  او ر  ہم  مشر ب  مختلف  گرو ہ  اور جما عتوں  کی تنظیم  سا زی "  اتفاق  کے بجا ئے  افترا ق  کا سبب  بنے  گی  اس سے  بچا ؤ ضروری ہے ۔

 امت  مسلمہ  کے ذمہ  سب  سے اہم  فریضہ  یہ ہے  کہ خلا فت  وا مرت  کے قیا م  کے لیے  سعی  کر یں  جما عت  امو ر  شر یعت  ایک نظم  و نسق  کے تحت  آنے  سے ہی  ملی  و حدت  کا خوا ب  پو را  ہو سکتا  ہے  ورنہ  انجا م  کا ر تشت تفرق  اور  انتشار  کے  ما سوا  کچھ  نہ ہو گا  قرآنی  تعلیما ت  میں اس سے  ہمیں  با ز  رہنے  کی تلقین  کی گئی  ہے ۔

﴿وَلا تَنـٰزَعوا فَتَفشَلوا وَتَذهَبَ ر‌يحُكُم...﴿٤٦﴾... سورة الانفال

اور امام المحدثین  بخا ری  رحمۃ اللہ علیہ  نے اپنی  صحیح  میں با یں  الفا ظ  تبو  یب  قا ئم  کی ہے ۔

«ما يكره من التنازع والاختلاف في الحرب وعقوبة من عصي امامه »صحیح البخاری کتاب الجہاد رقم الباب (164)

 (2)پھر آیت  با لا  سے استدا لا ل  کیا  ہے  انتہا ئی  دکھ  درد اور افسوس  سے کہنا  پڑتا ہے کہ آج  سیکو لر  ملحدا نہ  اور بے  دین   نظر یا ت  کے حا مل  افراد اور  تنظیمیں  پو ری  ہمت  اور قوت  کے سا تھ اسلا م  اور اہل اسلا م  کے خلاف  اپنی  ریشہ  دوانیوں  اور  تو ا نا ئیوں  کو  استعما ل  کر رہے  ہیں  کسی  حد  تک  وہ  اپنی  کا میابی  و کا مرا نی  کے  خوا ب  پو رے  ہو تے  بھی  دیکھ  رہے  ہیں لیکن  اسلا م  کے علمبردار  اور مد  عیا ن  کتا ب و سنت  با لخصوص سلفی  یا اہل  حدیث  حضرات  بری  طرح افتراق  و انتشا ر  کا شکا ر ہیں  جس سے  واپسی  کی  بظا ہر کو ئی  نظر  نہیں آتی ۔

«الا ان يشاء الله ربنا وسع ربنا كل شئي علما»

دراصل  با ت یہ ہے  کہ قریباً  ہر جما عت  اور  ہر تنظیم  کے ذمہ  داران  اور قائدین  حضرات  کے ذاتی نوعیت  کے کچھ  مفا دات اور اغرا ض  و مقاصد  ہیں  جن  سے  وابستگی  ان  کے نزدیک  جزو ایما ن  ہے عوام  کا لا  نعا م  کو دجل  و فریب  کے  ذریعے  سبز  با غ  دکھا  کر  انہی  کی تکمیل  و تر ویج  میں شب و روز  مصروف  کا ر ہیں اسی  کے نتیجہ  میں جگہ جگہ  لڑا ئی  جھگڑ ے  اور  ریا کا ری  اور قتل و غا رت  کا با زار  گر م  ہے  اور تکفیری  تو پوں  کے رخ  غیرو ں کی بجا ئے  اپنوں  کی طرف  زیا دہ  ہیں  اندریں  حا لا ت  خیرو  سلامتی  کی راہ  مجھے  تو صرف  اس میں  نظر  آتی ہے کہ  جما عتی  سیا ست  سے گو شہ  نشینی  اختیا ر  کر کے  مخلصین  احبا ب  کو ساتھ  ملا  کر یا  انفرادی  طور  پر  جیسے  بھی  ممکن  ہو  شہر  شہر قر یہ  قریہ  دعوتی  و تبلیغی  کا م  پو رے  انہما ک  سے شروع  کر دیا  جا ئے  اللہ  تعا لیٰ  خیرو بر کت   فر ما  کر شر ف  قبو لیت  سے  نوا زے گا ۔  ان  شا ء اللہ

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص503

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)