فتاویٰ جات: تعلیم وتعلم
فتویٰ نمبر : 12973
(178) لفظ ’ خلق ‘ کی وضاحت
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 20 August 2014 11:16 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

"لفظ خلق  "کی اضا فت  عا بد  و معبو د  دو نوں  کی طرف  ہے  دو نو ں  میں کیا فرق  ہے ؟مو لا نا حا فظ  عبد القادر  رو پڑی !

اسلا م علیکم  ورحمتہ اللہ  وبر اکا تہ !  تنظیم  اہل حدیث :میرا  پسند  یدہ  ہفت  روزہ  ہے  میں بڑے  شوق  سے اس  کا مطا لعہ  کر تا  ہو ں  اور آپ  کے علمی  نکا ت  سے مستفید  ہو تا ہو ں  اس ضمن  میں چند  اشکا ل  ذہن  میں  ہیں  برا ہ کر م  ان کی وضا حت  یا تو ہفت  روزہ  کے ذریعے  فر ما دیں  یا مجھے  برا ہ راست  لکھیں  بہر  حا ل  جس  طرح  آپ  خو د  منا سب  سمجھیں ۔

"خلق  کر نا "  بمعنی  پیدا  کر نا  صرف  ذات  با ر ی  کا خا صہ  قرار  دیا  گیا ہے   خوا ہ  خلق  ما در  سے  ہو یا  بغیر  ما در  کے  ارشا د  با ر  ی تعا لیٰ ہے :

﴿أَفَمَن يَخلُقُ كَمَن لا يَخلُقُ ۗ أَفَلا تَذَكَّر‌ونَ ﴿١٧﴾... سورة النحل

تو کیا  جو  خلق  کر تا ہے وہ  اس جیسا  ہو سکتا  ہے  جو خلق  نہیں  کر تا  سوتم  کیوں  نصیحت  حا صل  نہیں کر تے  ۔ اور مز ید  یہ کہ:

﴿أَم جَعَلوا لِلَّـهِ شُرَ‌كاءَ خَلَقوا كَخَلقِهِ فَتَشـٰبَهَ الخَلقُ عَلَيهِم ۚ قُلِ اللَّـهُ خـٰلِقُ كُلِّ شَىءٍ وَهُوَ الوٰحِدُ القَهّـٰرُ‌ ﴿١٦﴾... سورة الرعد

یعنی  کیا  انہوں  نے اللہ تعا لیٰ  کے کچھ  شر یک  ٹھہرا رکھے  ہیں کیا  انہوں  نے اللہ  تعا لیٰ  ہی  کی سی  مخلو ق  پیدا  کر  رکھی  ہے جن  کے سبب  مخلو قا ت  ان  مشتبہ  ہو گئی  ہے ۔(اور ان  کی خدا ئی  کے قائل  ہو گئے ہیں)آکہہ  دیجیے  کہ اللہ  ہی ہر چیز  کا پیدا  کر نے والا ہے اور وہی  یکتا اور سب  پر  غا لب  ہے ۔

مگر حضرت مسیح  کے با ر ے  میں فرما ن  ہے  کہ (سور آل عمرا ن آیت نمبر:49)

وہ مٹی سے پر ند ے  خلق  کر تے تھے  تو پھر  حضرت  مسیح  علیہ  اسلام : من خلق  ہو نے  کی وجہ  سے انسا نو ں  جیسے  تو  نہ  ہو ئے  بلکہ  اللہ تعا لیٰ  جیسے ہوئے  اور  عیسا ئیوں  کے عقیدہ الو ہیئت کی  تا ئیدہو گئی ! کیا یہ  محکما ت  قرآنی  کے خلا ف  نہیں ؟  اور اگر یہ کہا  جا ئے  کہ وہ با ذن اللہ خلق  کر تے تھے  تو کیا  اللہ تعا لیٰ  اپنی  صفا ت  کے خلا ف  اذن  دیتا  ہے ؟  اگر ایسا  ہے تو  جب فعل  خلق  کو اس نے اپنی  صفت  خاص  میں بیا ن  فر ما یا  ہے جس  میں مخلوق   کسی  صورت میں شر یک  نہیں  ہو سکتی  تو کیا  اس کے  خلا ف  اذا ن  دینا  گو یا  اپنی  صفت  کو خو د  ہی  با طل  کر نے  کے مترادف  نہ ہو ا؟ وضاحت  فر مائیں ۔


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

وا ضح  ہو کہ  اللہ تعا لیٰ  کے تما م  اسما ء  وصفا ت  کو کتا ب  اللہ  اور حدیث  صحیحہ میں ثا بت  ہیں  بلا تعطیل  بلا  تکییف  بلا  تمثیل  ان پر ایما ن  لانا  ہر  مر د  عورت  پر واجب  ہے چنا نچہ  قرآن  مجید  میں ہے :

﴿وَلِلَّـهِ الأَسماءُ الحُسنىٰ فَادعوهُ بِها ۖ وَذَرُ‌وا الَّذينَ يُلحِدونَ فى أَسمـٰئِهِ... ﴿١٨٠﴾... سورة الاعراف

میں کجی  (اختیا ر ) کر تے  ہیں ان  کو چھو ڑ  دو !"اور صحیح حدیث  میں ہے :

«ان اللہ تسعة وتسعين اسما من احصاها دخل الجنة» صحيح البخاري كتاب التوحيد باب ان الله مائة اسم الا واحد (٧٣٩٢) و(٢٧٣٦)صحيح مسلم كتاب الزكر والدعا باب في اسما ء الله  تعاليٰ وفضل من احصاها (٦٨-٩)

یعنی  اللہ تعا لیٰ  کے ننا نو ے  نا م  ہیں جس  نے ان  کا ورد کیا  جنت  میں داخل  ہوا ۔

سورۃ  مر یم  میں ہے :

﴿هَل تَعلَمُ لَهُ سَمِيًّا ﴿٦٥﴾... سورة مريم

"بھلا  تم کو ئی  اس کا ہم  نا م  جا نتے  ہو ؟ 

صفا ت  الہیہ  میں سے  بعض  ایسی بھی ہیں  جو بندو ں  اور خا لق  کے در میا ن  مشتر ک   نظر  آتی  ہیں مثلاً  علم  سمع  بصر  رؤیت  ید  وغیرہ  لیکن  یہ اشترا ک  صرف  ظا ہر ی  اور لفظی  ہے ور نہ  بندے  کی طرف  ان کی اضا فت اس کے  منا سب  حا ل  عجز  کے اعتبا ر  سے ہے  اور خا لق  کا ئنا ت  کی طرف  ان  نسبت  اس کے  کما ل  کے اعتبا  ر  سے ہے قرآن  کر یم  میں ہے :

﴿لَيسَ كَمِثلِهِ شَىءٌ ۖ وَهُوَ السَّميعُ البَصيرُ‌ ﴿١١﴾... سورة الشورىٰ

اس جیسی  کو ئی چیز  نہیں  اور وہ  دیکھتا  سنتا  ہے   انسا ن  کے با ر ے  میں ہے

﴿فَجَعَلنـٰهُ سَميعًا بَصيرً‌ا ﴿٢﴾... سورة الدهر

تو  ہم نے اس کو سنتا دیکھا  بنا یا ۔

شر ح  عقیدہ  طحا ویہ ص : 58 پر بحو الہ  الفقہ  الالکبر " امام ابو حنفیہ  رحمۃ اللہ علیہ   کا قول  ہے  نہ اللہ تعا لیٰ  مخلو ق  میں  کسی  کے مشا بہ  اور  نہ مخلو ق میں  سے کو ئی اس کے مشا بہ  ہے اور اس کی تما م  صفا ت  مخلو ق  کی صفا ت  کے خلا ف  ہیں اس  کا علم  قدرت  رؤیت  بندوں  کی طرح  نہیں  امام  نعیم  بن  حما د   شیخ  البخا ر ی  رحمۃ اللہ علیہ کا قو ل ہے  جس  نے اللہ  تعا لیٰ  کو مخلو ق  میں سے  کسی  کے سا تھ  تشبیہ  دی  وہ  کا فر  ہے ۔اب آیے  اس مشکل  کی طرف  جو آپ  کو لا حق  ہے خلق  (پیدا  کر نا )  اللہ عزو جل  کی صفت  ہے جس  طرح  کہ متعدد  آیا ت و احادیث  اس پر  دا ل  ہیں  تو اس کی  نسبت  مخلو ق  ( حضرت  عیسیٰ  علیہ السلام ) کی طرف  جو قرآن  میں  ہو ئی  ہے اس سے  عیسا ئیوں  کے عقیدہ  الو ہیت  مسیح   علیہ السلام   کا اثبا ت  اور صفت  اللہ  کا تعطل  لا ز م  آتا ہے ؟

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص484

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)