فتاویٰ جات: نظری تصوف
فتویٰ نمبر : 12955
(159) تصوف کی تعریف
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 19 August 2014 11:52 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

تصوف  کے با ر ے  میں اختصا ر  سے بتا ئیے  کہ یہ کیا ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

تصوف دراصل فلسفہ  ہی کی ایک شکل ہے  اور یسے  عقیدے کا نا م  ہے جس  سے  امو ر غیبیہ  کا دل پر کشف  ہو تا ہے اس کا تعلق  حضرات  انبیا ء  علیہ السلام  کی  تعلیما ت  سے با لکل نہیں  ہے اس سلسلہ  میں صوفیا  ء کا نقطہ نظر  یہ ہے  کہ ہم  برا ہ  را ست اللہ  کے رسول سے  بصورت  کشف  علو م  حا صل  کر تے ہیں ۔

اور ہم اس حقیقت  کو چھپا نا  گناہ  سمجھتے ہیں  کہ کا ئنا ت  میں صرف  اللہ کا وجو د  ہے اس لحا ظ  سے ہر انسا ن  اللہ  ہے اللہ  انسا ن  ہے بلکہ  حقیقت  میں تما م  ایک ہیں   البتہ  صورتوں  کے لحا ظ  سے فرق ہے  وہ بر مل  اس  با ت کا  اظہا ر کر تے ہیں  کہ غیبی علم  کے حصول  کے لیے کشف  ہی ایک  را ستہ  ہے جس  میں مجا ہد ہ کر نا پڑتا ہے  مجا ہدہ  کی بے شما ر  صورتیں ہیں  جو بلحا ظ   وقت  جگہ  اشخا ص  کے تبد یل  ہو تی  رہتی  ہیں البتہ   نفس  کو  اذیتوں  سے  ہمکنا ر  رکھنا معینہ  وردوظا ئف  کا با ر  با ر  لو گو ں  سے اختلا ط   نہ کر نا  با لکل الگ  تھلگ  رہنا  اور  پا کیز  گی  کا  خیا ل  نہ   کر نا  لا زمی  امو ر   ہیں  البتہ  اتنی  با ت  ذہن  نشین  کر لیجیے ضروری  نہیں  کہ جو  انسا ن  تصوف  کی طرف  منسو ب  ہے اس کا عقیدہ  بعینہ وہی  ہے جس  کا ہم  نے ذکر  کیا ہاں  وہ شخص  جو تصوف  کے آخری  مرحلہ پر پہنچ  چکا ہے اس کا عقیدہ   واقع یہی ہے  اور جو صوفی  ابھی  تصوف کے مرا حل  طے  کر رہا  ہے اور آخر ی  مر حلہ  تک  رسائی حا صل  نہیں کر سکا  ہے تو  وہ  جہا ں  تک پہنچا  ہے اسے  بس  اتنی  ہی  خبر  ہے وہ آخر ی  مرا حل  سے بے  خبر  ہے  اگر وہ  ہما رے  بیان  کر دہ  عقیدے  کا انکا ر  کر رہا  ہے تو ہم  اسے  معذر  سمجھتے  ہیں اس لیے  کہ ابھی  وہ اس   مقا م سے نا آشنا ہے  جہا ں صوفی کی  آخری  منزل  ہے۔ (افکا ر  صوفیہ  مترجم ص18)

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص436

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)