فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 12948
(151) اسلامی مملکت میں مذہبی اقلیتوں کے حقوق
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 19 August 2014 11:07 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ان دنو ں  تعلیمی  اداروں  میں عیسا ئی  طلبہ  کو اسلا میا ت  کے  تبادلہ  میں  اخلا قیا ت  یا سو کس  پڑھنے  کی سہو لت  ہے عیسا ئیوں  کو شکا یت  ہے کہ یہ مضا مین  خشک  ہیں طلبہ  ان  میں  تھوڑ  ے نمبر  حا صل  کر تے  ہیں  اور نتیجتاً  میرٹ  سے رہ جا تے  ہیں ۔

آئینی طو ر  پر  ہر شہری  کو برا بر کا حق  حا صل  ہے اور حکو مت  اقلیتوں  کے مفا دا ت  کی پا بند ہے ۔اندریں  حا لا ت  عیسا ئیوں  نے لا ہو ر  ہا ئی کو ٹ  میں  رٹ  دا ئر کی ہے  کہ ان  مقدس  کتا ب  با ئبل  کو  نصا ب  تعلیم  میں   داخل  کیا  جا ئے  عیسا ئی  طلبہ  اس مضمون  میں 80تا 95فی  صد نمبر  حا صل  کر کے  میر ٹ  پر پو ر ے  اتر  سکیں  گے  با ئبل  پڑھا نے  کے لیے ایک لا کھ  عیسا ئی اساتذہ  رکھے  جا ئیں  گے اس سے  یہ "رو حا نی " فا ئدہ  بھی  ہو گا کہ  متوا تر  دس  سا ل با ئبل  پڑھنے  کے بعد  طا لب علم  مکمل  مسیحی ہو کر  نکلے  گا

(1)جنا ب  کی خد مت  میں اس  مو ضو ع  پر  اسلا می  مو قف  واضح  فر ما نے  کی درخوا ست  ہے ؟

(2)کیا اسلا می  شر یعت  مین  اسلا می  پا کستا ن  کے اندر  عیسا ئی ہند  بدھ  سکھ  پا رسی  قا دیا نی  اقلیتوں  کے طلبہ  کو سر کا ری  خر چہ  اور قاعدہ  نصا ب  تعلیم  کے طو ر پر ان  کی مذہبی  کتب  کی کفر و شرک  بھر ی  اور خلا ف  اسلا م  تعلیم  دینے  کی اجا زت  ہے ؟

کیا اسلا می  مملکت میں  مذہبی  اقلیتوں  کا یہ  حق  مسلم  ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

(1) زما نہ  نبوی  صلی اللہ علیہ وسلم  اور خلا فت  را شدہ کے  ادوا ر  پر غور خو ض  کر نے  سے  یہ با ت  کھل  کر  سا منے آجا تی  ہے کہ یہو د  و نصا ریٰ  اور دیگر  غیر  مسلم  اقوام  کا دینی  منا ہج  تعلیم  و تد ریس  کے ساتھ  کسی قسم  کا  تعلق  یا واسطہ  نہ تھا  بلکہ  مختلف ادوار  میں ان  کے تعلیمی  ادارے  مدارس  ومعا ہد وغیرہ  جدا گا نہ  حیثیت  کے  حا مل تھے نہ غیر  مسلم  طلبہ  کا مسلم   طلبہ  سے اختلا ط تھا اور نہ  ہی غیر  مسلم  اساتذہ  کبھی  اسلا می مدارس  میں  بطو ر  معلم  مقرر ہو ئے ۔

امتیا زی  تہذیب  و تمدن  اور عقا ئدی  افتراق  کا  تقا ضا  یہی  ہے لیکن  بعد  میں  مر ور زما نہ  سے  ہوا  یہ کہ  استعماری  عنا صر  اور اس  کے  پر  وردہ  اور زر خرید  ملحدانہ  نظر یات  کے   پر چا ر  کر نے  والے  اشخا ص  نے با قاعدہ  منظم   سا زش  کے تحت  اسلام  کے نا م  پراسلامی  ثقا فت  کا حلیہ  بگا ڑ  نے  میں کو ئی  کسر  نہیں  اٹھا رکھی  اس کے  نتیجہ  میں  سا دہ لو ح مسلما ن  صرا ط  مستقیم  سے  بھٹک  کر منزل  مقصو د  اور جا دہ حق  سے  کو سوں  دور ہو تا چلا  گیا  یہاں  تک کہ واپسی  کی را ہیں مسدود نظر آنے لگیں ۔اہل دانش  کے ہاں  مقولہ  معروف  ہے کہ  انگریز  پا ک  و ہند  کو چھوڑ کر چلا گیا لیکن  تعلیم و  تعلم  اور تہذیب  ثقا فت  کی سورت  میں ذہنی غلا می  ورثہ  مین چھوڑ گیا اس سے نجا ت  حا صل  کر نا جو ئے  شیر  لا نے  سے کم  نہیں  اس کے گما شتے نصف  صدی  سے نظا م  تعلیم  پر قا بض  ہیں  جس کسی  نے ان  کے آڑے  آنے  کی کو شش  کی اسے  نا کا می  کا سا منا  کرنا پڑا۔آج  کے  انحطاطی  دور  میں اس  امر کی اشد  ضرورت  ہے کہ کو ئی مرد مجا ہد  آگے  بڑھ  کر مو جو د  سیکولر  نظا م  میں انقلا ب  بر پا  کر کے  اس کا رخ  مکہ اور مد ینہ  کی صا ف  شفا ف  فضا  کی طرف  مو ڑ ے  تا کہ  بند گا ن  اللہ  دنیا وی  و اخر وی  سعادتوں سے  بہرہ  در ہو سکیں ۔  لہذا  بنیا دی  طو ر  پر جدو جہد  اس کی امر  کی ہو نی  چا ہیے  کہ معصوم   مسلم  بچے  کو کفر کی مق ار  بت سے دور  رکھنے  کی سعی کی جا ئے  تا کہ  غیر  مر ئی  جرا ثیم  سے محفو ظ  و ما مو ن  رہ  سکے  اس لیے  کہ انسا نی  فطر ت  میں  یہ شئی  مر کو ز  ہے کہ بیر نی اثرا ت  سے متا ثر  ہوئے  بغیر  نہیں رہ  سکتا  ۔

''(لتنبعن سنن من قبلکم شبرا بشبر ۔۔۔)صحيح البخاري كتاب احاديث الانبياء باب مازكر عن بن اسرائيل (٣٤٥٦) و(7320) صحيح مسلم كتاب العلم باب اتباع سنن اليهود والنصاري (٦٧٨١)

میں اسی  با ت کی طرف  اشا ر ہ  ہے.

 اس بنا ء  پر حا فظ  ابن حجر  رحمۃ اللہ علیہ  نے فر ما یا  ہے کہ راسخين في العلم

کے ما سواعا مۃ النا س  کے لیے  یہو د  نصا ریٰ  کی محر ف  و مبد ل  کتا بو ں  کا مطا لعہ  کر نا ممنو ع  ہے  (فتح  الباری :13/525)چہ جا ئیکہ  اسلا می  ماحول  میں با ئبل  کی تدریس  کی اجا زت  مر حمت  کر کے  مخا لفین  اسلا م  کی حو صلہ  افزا ئی  کی جا ئے  میر ے  خیا ل  میں اصلاً اربا ب  اقتدار سے  یہ مطا لبہ  ہو نا چا ہیے  کہ قطع  نظر  آئین  سے اقلیتوں  کی شہر ی  آزا دی  اور حقو ق  اسی  طرح  متعین کیے جا ئیں ۔جس طرح کہ اوائل  اسلا م  میں  حا صل  تھے 

’’ الخير كل الخير في الاتباع والشر كل الشر في الابتداع ’’

اس طریق  سے مو جود  الجھن  اور بگا ڑ  کا حل  خو د بخو د  نکل  آتا ہے  اللہ  رب  العزت   جملہ  مسلما نو ں  میں فہم  و بصیر ت  پیدا  فرما ئے  تا کہ  وہ  کما  حقہ  اپنی  ذمہ داری  کا احسا س  و ادرا ک  کر سکیں ۔والله ولي التوفيق

 (2)نیز  اسلا می  نقطہ  نظر  سے کسی  فرد  کو ہر گز  اس با ت  کی اجا زت  نہیں  کہ اسلا می  بیت الما ل  کو کفر  یہ  افکا ر  کی  ترو یج  و تشہیر میں ضا ئع  کرے  قیا مت  کے رو ز  ایسے  لو گ  اللہ کے ہا ں  جوا بدہ ہیں  صحیح  حدیث  میں ہے :

’’ كلكم راع وكلكم مسئول عن رعيته الامام راع ومسئول عن رعيته ’’صحیح بخاری باب الجمعة في القري والمدن)

وائے افسو س  !ہو نا  تو یہ چا ہیے تھا کہ اسلا می خزا نہ  غلبہ  دین  کے مصارف  میں خر چ  ہو تا لیکن  غلط  کا ر لو گو ں  کے ہا تھ چڑھنے  کی وجہ  سے الٹا  چکر  چل رہا  ہے  اپنے  سر والا  حسا ب  بنا  ہوا  ہے اللہ  عزوجل  ار با ب  حل  و عقد کو اپنے  فر یضے  کا فہم  عطا  فر ما ئے  ۔آمین !

(3) اسلا می  مملکت  میں اس  قسم  کے حقو ق  کا تصور  تک  مو جو د  نہیں  یہ کیسے  ممکن ہے کہ اسلا م  اپنے ما ننے  والو ں کے خلا ف  کفر و شر ک  کو مسلح  کر ے  اسلا م  نے  تو اس با ت  سے سختی  سے رو کا  ہے کہ کفا ر  کے  ہاتھ  اسلحہ  مت فرو خت  کیا  جا ئے  کہیں  ایسا  نہ ہو  کہ  کل  یہی  اہل  اسلا م  کیخلاف استعمال ہونے لگے رب العزت ہمارے حال پر رحم فرمائے  آمین!

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص432

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)