فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 12946
(149) غزوۂ ہند کانفرنس
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 19 August 2014 10:57 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

آج کل ایک جما عت  غزوہ  ہند  کا نفرنس  منعقد  کر رہی  ہے ہمارے  مو لو ی  صا حب  کا کہنا ہے کہ غزوہ  ہند  کا نفرنس  نا م  رکھنا  غلط  ہے  غزوہ  وہ  ہو تا ہے جس  میں رسول اکرم  صلی اللہ علیہ وسلم  شا مل  ہوں۔؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اصحا ب  مغا  زی  کے نز دیک  مغا زی  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  کا مفہو م  یہ ہے ۔

’’ ما وقع من قصد النبي صلي الله عليه وسلم الكفار بنفسه او بجيش من قبله ’’(فتح الباری 7/379)

یعنی  "نبی  صلی اللہ علیہ وسلم کا ہذا تہ کفا ر  کا قصد  کر نا  یا آپ  کا اپنی  طرف  سے ان  کے مقا بلہ  میں  لشکر  روانہ  کر نا ۔

اس تعریف  سے معلو م  ہوا  کہ غزوہ  کے لیے  نبی صلی اللہ علیہ وسلم  کا بنفس نفيس شریک  ہو نا  ضروری  نہیں  لفظ  غزوہ  کا اصل  معنی  قصد الشئي ہے (تفسیر  قر طبی4/246)اور (فتح البا ری 7/279)میں ہے :

’’اصل الغزو القصد ومغزي الكلام مقصده ’’

یعنی  "کسی  شی  کا قصد  کر نا  لغو ی  معنی  کے اعتبا  ر سے  اس کا اطلا ق  غزوہ  ہند پر  ہو سکتا  ہے  قرآن  میں ہے :

﴿أَو كانوا غُزًّى...١٥٦﴾... سورة آل عمران

’’یا جہا د  کو نکلیں ’’

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص431

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)