فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 12896
درود اور رحمت بھیجنے کے لیے مخصوص الفاظ
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 17 August 2014 09:38 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

(1) الفاظ صلوۃ اور علیہ  السلام  کن  کے لیے مخصوص  ہیں ؟

(2) الفاظ رضی  اللہ  کن  کے لیے مخصوص  ہیں ؟

(3) الفا ظ رحمۃ اللہ کن  کے لیے مخصوص ہیں ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

سا ر ی امت مسلمہ  اس با ت  پر  متفق  ہے  کہ صلوۃ  اور سلام  کا اطلا ق  انبیا ء  علیہ السلام   کی ذا ت  عا لیہ  کے لیے ہے  اس با ر ے میں اہل علم  کا اختلا ف ہے کہ ان  لفظوں  کا اطلا ق  غیر  نبی  پر ہو سکتا ہے  یا نہیں  اس باب میں   حا فظ  ابن کثیر  نے اپنی  شہرہ  آفا ق  تفسیر  میں زیر  آیت :

﴿إِنَّ اللَّـهَ وَمَلـٰئِكَتَهُ يُصَلّونَ عَلَى النَّبِىِّ ۚ يـٰأَيُّهَا الَّذينَ ءامَنوا صَلّوا عَلَيهِ وَسَلِّموا تَسليمًا ﴿٥٦﴾... سورة الاحزاب

نہا یت  عمدہ  اور قیمتی  بحث  کی ہے  جو پیش خدمت ہے چنا نچہ  فر ما تے ہیں :  نبیوں  کے سوا غیر  نبیوں  پر صلوۃ  بھیجنا  اگر  تبعا ہو تو بے شک  جا ئز  ہے جیسے  حدیث  میں ہے :

’’ اللهم صلي علي محمد وآله وازواجه وزريته ’’(صحيح البخاري كتاب احاديث الانبياء رقم الباب (10) ح(٣٣٦٩)

ہاں صرف  غیر  نبیوں  پر صلوۃ  بھیجنے  میں اختلا ف  ہے بعض  تو اسے  جا ئز  بتلاتے  ہیں  اور دلیل  میں آیت  :

﴿هُوَ الَّذى يُصَلّى عَلَيكُم...٤٣﴾... سورة الاحزاب

اورآیت

﴿أُولـٰئِكَ عَلَيهِم صَلَوٰتٌ...١٥٧﴾... سورةالبقرة

(صلي عليهم)پیش کر تے ہیں ۔ اور حدیث  بھی کہ رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  کے پا س  کسی  قوم  کا صدقہ  آتا  تو  آپ  فر ما تے ۔اللهم صلي عليهم(صحيح بخاري كتاب المغاذي باب غزوة الحديبية(٤١٦٦)وصحيح مسلم)چنانچہ  حضرت  عبد اللہ  بن ابی  اوفیٰ  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   فر ما تے ہیں ۔ جب  میر ے  والد ۔آپ کے پا س  صدقہ کا ما ل لا ئے  تو آپ  صلی اللہ علیہ وسلم  نے فر ما یا :

(اللهم صلي علي ال ابي اوفيٰ)( صحیح البخاری کتاب الزکاة باب صلاة الامام عائه نصاحب الصدقه...(1497) صحیح مسلم (2492) (صحیحین)

ایک اور حدیث  میں ہے کہ ایک عورت نے کہا  یا رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  ! مجھ  پر اور میر ے  خا وند پر صلو ۃ  بھیجے تو آپ نے فر ما یا :

(صلي الله عليك وزوجك)( صححه الالبانی صحیح ابی داؤد کتاب الوتر باب الصلاة علی غیر النبی  صلی الله علیه وسلم  (1533)

لیکن جمہور علما ء  اس  کے خلا ف  ہیں اور کہتے ہیں  کہ انبیا ء  کے سوا  اوروں  پر خا لصتاً صلوۃ  بھیجنا  ممنوع  ہے اس  لیے  کہ اس لفظکا استعما ل  انبیا ء  علیہ السلام   کے لیے اس قدر بہ  کثرت  ہو گیا  ہے  کہ سنتے  ہی  ذہن  میں  یہی  خیا ل  جا تا ہے کہ یہ  نا م کسی  نبی  علیہ السلام   کا ہے  تو احتیا ط  اسی میں ہے  کہ غیر  نبی  کے لیے  یہ الفا ظ  نہ کہے  جا ئیں  مثلاً ابو بکر  رضی اللہ تعالیٰ عنہ "صلی علیہ " یا علی  صلی اللہ علیہ وسلم  نہ  کہا  جائے  گو  معنا  اس میں  کو ئی  قبا حت  نہیں  جیسے " محمد  عزو جل " نہیں کہا  جا تا حالانکہ  ذی  عزت  اور ذی مر تبہ  آپ  بھی  ہیں  اس لیے کہ یہ الفا ظ  اللہ تعالیٰ  کی ذات  کے لیے  مشہو ر  ہو چکے  ہیں  اور کتا ب  و سنت  میں  صلوۃ  " کا  استعما ل  غیر  انبیا ء  کے لیے  ہو ا  ہے وہ  بطو ر  دعا  کے  ہے  اسی  وجہ  سے  "آل  ابی  اوفی  کو اس کے بعد  کسی  نے ان الفا ظ  سے یا د  نہیں  کیا  نہ حضرت  جا بر  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   کو  اور نہ  ان  کی بیو ی  کو  یہی  مسلک  ہمیں  بھی اچھا  لگتا ہے (واللہ اعلم )

بعض  ایک  اور وجہ  بھی بیا ن کر تے  ہیں یعنی  یہ  یہ کہ  غیر  انبیا ء  کے لیے  یہ الفا ظ  صلو ۃ  استعما ل  کر نا  کر نا  بد عیتوں  کا  شیوہ  ہو گیا  ہے  وہ اپنے   بزرگوں  کے حق  میں  یہی  الفا ظ  استعما ل کر تے  ہیں  پس  ان کی اقتداء  ہمیں  نہ کر نی   چا ہیے  اس میں  بھی اختلا ف .ہے  کہ  یہ  مخا لفت  کس در جہ  کی ہے  حر مت  کے  طو ر  پر  یا کرا ہت  کے طو ر  پر یا  خلا ف  اولیٰ  ہے ۔  صحیح  یہ ہے کہ یہ مکروہ  تنز یہی ہے  اس لیے  کہ بد عتیوں  کا طریقہ  ہے  جس  پر  کا ر  بند  ہو نا  ہمیں  ٹھیک  نہیں اور مکرو ہ  وہی  ہو تا  ہے  جس میں  نہی  مقصود  ہو زیا دہ  تر  اعتبا ر  اس میں اسی پر ہے  کہ صلو ۃ  کا لفظ  سلف  میں نبیوں پر ہی  بو لا جا تا ہے جیسے  کہ عزو جل  کا لفظ  اللہ  تعا لےٰ  ہی کے لیے   بولا  جا تا رہا ۔

اب رہا "سلام  سو اس کے با ر ے  میں شیخ  ابو  جو  ینی  فر ما تے  ہیں  کہ یہ  بھی  "صلو ۃ  "کہ معنی  میں۔

ہے  پس  غا ئب  پر اس کا استعما ل  نہ کیا جا ئے اور  جو نبی  نہ  ہو اس کے لیے  خا صتا اسے  بھی نہ  بو لا  جا ئے  پس  علی  علیہ السلام   نہ کہا جا ئے  زندوں  اور مردوں  کا یہی  حکم ہے  ہاں  جو سا منے  مو جو د  ہو اس  سے خطا ب  کر کے 

''سلام عليكم يا السلام عليك يا عليكم’’

"کہنا  جا ئز  ہے اور  اس پر اجما ع  ہے  یہاں  پر  یہ با ت  یا د رکھنی  چا ہیے  کہ عمو ماً مصنفین  کے  قلم  سے علی  علیہ السلام   نکلتا ہے یا علی کر م اللہ وجہہ  نکلتا ہے  گو معنی  اس میں کو ئی حر ج نہ ہو   لیکن اس سے  اور صحا بہ  رضوان اللہ عنھم اجمعین  کی جنا ب  میں  ایک طرح  سوء ادبی  پا ئی جا تی  ہے  ہمیں  سب  صحا بہ  رضوان اللہ عنھم اجمعین  کے ساتھ  حسن  عقیدت  رکھنی چا ہیے  ۔یہ الفا ظ  تعظیم  و تکر یم  کے ہیں  اس لیے  حضرت  علی  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   سے  زیا دہ  مستحق  ان  کے حضرت  ابو بکر صدیق  اور حضرت  عمر  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  اور عثما ن  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  ( رضی اللہ تعالیٰ عنہ )حضرت  ابن عبا س  رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے  مروی ہے  کہ نبی  صلی اللہ علیہ وسلم   کے سوا  کسی  اور  صلوۃ  نہ بھیجنی  چا ہیے  ہاں  مسلما ن  مردوں  اور عورتوں  کے لیے  دعا ئے  مغفر ت  کر نی  چا ہیے  حضرت  عمر  بن  عبد العزیز  رحمۃ اللہ علیہ   نے اپنے  ایک  خط  میں  لکھا کہ بعض  لو گ  آخر ت  کے اعما ل  سے دنیا  کے جمع  کر نے  کی فکر  میں  ہیں  اور بعض  مو لو ی  واعظین  اپنے  خلیفوں  اور امیروں کے لیے "صلوۃ  کے وہی  الفا ظ  بو لتے  ہیں  جو رسول  اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کے لیے  تھے  جب  تیرے  پا س میرا  یہ خط  ہینچے  تو ان  سے کہہ  دینا  کہ "صلوۃ " صرف  نبیوں  کے لیے  ہے اور  عام  مسلما نوں  کے  لیے  اس کے  سوا  جو چا ہیں  دعا  کر یں  حضرت  کعب  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   کہتے ہیں  ہرصبح  ستر ہزار  فرشتے  اتر  کر قبر  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  کو گھیر  لیتے ہیں  اور  اپنے  پر سمیٹ  کر نبی  صلی اللہ علیہ وسلم  کے لیے دعا ئے رحمت  کر تے ہیں  اور ستر  ہزار را ت  کو  آتے ہیں  یہاں  تک  کہ قیا مت  کے دن  جب آپ قبر  مبا ر ک  شق  ہو گی  تو آپ  صلی اللہ علیہ وسلم   کے ساتھ  ستر ہزار  فرشتے  ہو گے ۔(ضعفه حسين سليم اسد الدارني محقق الدارمي الدارمي باب ما اكرم الله تعاليٰ نبيه صلي اله  عليه وسلم بعد موته رقم (٩٤) وقال: فيه علتان الاوليٰ) ضعف عبدالله بن صالح _(والثانية) الانقطاع ايضاً  فان نبيه بن  وهب لم يدركعباً)

امام نو وی  رحمۃ اللہ علیہ فر ما تے ہیں  کہ نبی  صلی اللہ علیہ وسلم   پر صلوۃ و سلام"  ایک ساتھ  بھیجنے  چا ہیئں  صرف  صلی اللہ  علیہ  یا صرف   علیہ السلام   نہ کہے  اس آیت  میں بھی  دونوں  ہی  کا حکم  ہے پس  اولیٰ  یہ ہے  کہ یوں  کہا  جا ئے ۔

’’ صلي الله عليه وسلم  تسليما ’’اس بحث  میں با لخصوص  ان لو گوں  کے لیے  بھی دعوت  غو ر  و فکر  ہے جنہوں  نے اپنی  مسجدوں  کے نا م  اسلام  میں امتیا زی حیثیت  کی حا مل  مساجد  جیسے  رکھے  ہو ئے  ہیں ۔

جہا ں  تک  دعا ئیہ  الفا ظ "ترضی  "اور  ترحم"  کا تعلق  ہے اگر چہ  بظا ہر  ان کا اطلا ق  سب مو من  مسلما نوں  کے لیے  عا م  اور  یکساں  ہے لیکن  اندریں  صورت  افضل  و اولیٰ  یہ ہے  کہ "رضی  اللہ عنہ " کو زمر ہصحا بہ  کرا م  رضوان اللہ عنھم اجمعین   کے سا تھ  مختص  کر دیا  جا ئے  اس لیے  کہ یہی   وہ  پا کبا ز ہستیاں  ہیں جن کو خا لق  الکون  نے  بنصوص  قرآنیہ  سند  رضا  مر حمت  فر ما ئی ہے﴿رَّضِيَ اللَّـهُ عَنْهُمْ وَرَضُوا عَنْهُ﴾... سورة البينة:8

اور پھر  عر ف عا م میں بھی "رضی  اللہ عنہ "  کے  استعما ل  سے  متبا درلی  الی  الذہن  صحا بہ کرا م  رضوان اللہ عنھم اجمعین  ہی ہو تے ہیں  اور  رحمہ  اللہ  یا رحمۃ اللہ  علیہ  کا اطلا ق  عا م اولین  و آخر ین  سب پر ہے  اس میں  بعد والوں  میں سے  کسی  کی نہ تخصیص  ہے اور نہ استثناء

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص276

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)