فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 12882
مسلم عورت کا غیر مسلم کے ساتھ جج جیوری میں شامل ہونا
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 16 August 2014 11:24 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کیا فر ما تے ہیں  علما ئے  دین  اس مسئلے  میں کہ ازوئے  شر ح  کیا کسی  مسلما ن  جوا ن  عورت  کو غیر  مسلم  مر د ججوں  کی جیو ری  میں شا مل  ہو کر  عدا لتی  فیصلے  کر نے  کی اجا ز ت  ہے  یا نہیں ؟ جب کہ وہ  عورت  قا نو ن  اور شر یعت کا  علم  بھی  نہ رکھتی  ہو ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

شرعاً عورت  کے لیے  ویسے  ہی جا ئز  نہیں  کہ عہد  قضا ء  پر  فا ئز  ہو چہ  جا ئیکہ  غیر  مسلم  ججوں  کے سا تھ  بیٹھ  کر فیصلے  کر ے  مز ید  آنکہ  قا نو ن  و شر یعت  سے  عد م  وا قفیت  بھی  اہم  تر ین  موا نع  سے  ایک ما نع  سے ایک  ما نع  ہے اہل علم  کا اس با ت  پر اتفا ق ہے  کہ عورت  قصاص وحدود  میں گواہی  نہیں  دے  سکتی  تو پھر  وہ  جج  کیسے  بن سکتی  ہے ؟ فتح  البا ری 5/266میں  حا فظہ ابن حجر  رحمۃ اللہ علیہ   فر ما تے ہیں ۔

واطلق ابن جرير وحجة الجمهور الحديث الصحيح ;« ما افلح قوم ولوا امورهم امراة » وقد  تقدم ولان القاضي يحتاج الي كمال الراي وراي المراة ناقص ولا سميا في محافل الرجال ’’

اہل علم  کا  اس  با ت پر اتفا ق  ہے کہ جج  کے لیے  مرد ہو نا  شر ط ہے  سوائے  حنفیہ  کے انہوں  نے ۔

حدود  کو مستثنیٰ قراردیا ہے (یہ مر د کے سا تھ  مخصوص  ہیں  البتہ  ما لی  معاملات  میں حنفیہ  کے نز دیک  عورت کی قضا ء  جا ئز ہے ) اور ابن جریر  رضی اللہ تعالیٰ عنہ   کے نز دیک  علی  الا طلا ق  جوا ز  ہے  جمہو ر  کی دلیل  صحیح  حدیث  ہے  کہ جو  قو م  اپنے  معا ملا ت  کا ذمہ دار عورت  کو بنا دے  وہ نا کا م  ہے (نظرالرقم المسلسل)(232)اور اس لیے  بھی  کہ جج  کو کما ل  را ئے  کی ضرورت ہو تی  ہے  جب  کہ عورت  کی را ئے  نا قص  ہے با لخصوص  مردوں  کی محا فل میں ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص256

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)