فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 12880
(76) نظریہ ضرورت کی حقیقت
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 16 August 2014 11:17 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

شریعت  کے نز دیک "نظر  یہ  ضرورت "کی  کیا حقیقت  ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

نظریہ ضرورت  سے مقصود  وہ حا لت ہے جس  میں آدمی  اپنے  اختیا رات  استعما ل  نہ کر سکے  جیسے  سن  سا ت  ہجر ی میں  مسلما نوں  نے  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کی معیت  میں  اس حا لت  میں  بیت اللہ  کا طوا ف  کیا کہ اس کے  اندر تین سو سا ٹھ  بت  رکھے ہو ئے تھے  جب کہ اس کی تطہیر  بعد میں  ہو ئی چو نکہ  کفا ر  کا غلبہ  تھا  وہ اس میں  رکا وٹ  بنے  ہو ئے تھے  جب کہ اس  میں دخل  مصلحت  کے خلا ف  سمجھا گیا  جس  سے کئی  خرا بیاں  جنم  لے سکتی  تھیں  اسی طرح  اسلا م  نے  بحا لت  اضطرا ری  بعض  حرا م چیزوں  کے کھا نے  کو مبا ح  قرار  دیا ہے ۔

مثلاً:مردا ر خو ن  خنزیر  کا گو شت  اور وہ  چیز  جس پر اللہ  کے سوا کسی  اور کا نا م  پکا را  گیا ہو  بو قت  مجبو ر ی  ان کے  کھا نے  کو بالشروط جا ئز  رکھا ہے ۔ (البقرۃ:173)اس قسم کی حا لت  اگر  سو دی  کا رو با ر  میں  لا حق  ہو تو  بعض  اہل علم  نے اکل ربا کے جوا ز کا بھی فتویٰ  دیا ہے  لیکن  صحیح  با ت  یہ معلوم  ہو تی ہے  کہ سو د کو ایسی  حا لت  میں  بھی جا ئز  قرار درست  نہیں کیو نکہ  استثنا ئی چیزیں  مخصو ص  ہیں جبکہ  ربو ی معا ملا ت  میں  ایسی  کو ئی  تخصیص  وارد نہیں

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ ثنائیہ مدنیہ

ج1ص255

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)