فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 11850
(550) اسرائیل کو تسلیم کرنا شرعاً کیسا ہے؟
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 19 May 2014 12:48 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ملتان  سے محمد  خا ں لکھتے ہیں  کہ مندرجہ ذیل  سوالا ت  کا قرآن  و حدیث  کی رو شنی  میں جوا ب در کا ر  ہے ؟

(1)آج کل عرا ق  میں پا کستا نی  افو اج  بھیجنے  کے متعلق  اخبا را ت  میں لکھا جا رہا ہے  اس کے متعلق  شرعی  لحا ظ  سے وضا حت  کر یں ،

(2)اگر اسرا ئیل  کو تسلیم  کر لیا تو ایسا  کر نا شر عاً جا ئز  ہے یا نا جا ئز  برا ہ کرم  تفصیل سے  جوا ب دیں ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

عرا قی  عوام  امت مسلمہ  کا حصہ  ہیں  ان کے حقو ق  وہی  ہیں جو عام  مسلما نو ں کے ہیں  اس وقت  ائمہ  کفر  نے اس  با ت  پر اتفا ق  کر لیا ہے  کہ شجر  اسلا م کو بیخ  دین  سے اکھا ڑ  دیا جا ئے  اور  اہل اسلا م  سے بھی  جینے  کا حق  چھین لیا  جا ئے  انہوں  نے پہلے افغا نستان  میں  خو ن  مسلم  سے ہا تھ  رنگے  پھر  عراقی  عوا م  پر چڑ ھ  دوڑے  ہیں تا کہ  انہیں صفحہ  ہستی  سے نیست  و نا بو د  کر دیا جا ئے  شر یعت  کی نظر  مین تمام  مسلما ن  آپس میں  بھائی بھا ئی  ہیں  رنگ و نسل  قو م   ملک  کی اس  میں  کو ئی تمیز  نہیں  ہے ہر مسلما ن  کا فر ض  ہے کہ وہ مصیبت  کے وقت  اپنے مسلما ن  بھا ئی  کی مدد  کرے  اور ضرورت  کے وقت  اپنے بھا ئی  کا بھر پو ر  تعاون  کر ے  کسی بھی  مسلما ن  کے خلا ف  کفا ر  کا تعاون  کر نا  بہت  گھنا ؤ  نا جر م  ہے جس  کی شریعت  میں اجا ز ت  نہیں  ہے  حدیث  میں ہے  کہ ایک  مسلما ن  دوسر ے  مسلما ن  کا بھا ئی  ہے اس پر ظلم  کر نا یا اسے دوسروں کے رحم و  کر م پر چھوڑ  نا جا ئز  نہیں ہے ۔(صحیح  بخا ری : مظا لم 2442)

نیز رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   نے فر ما یا :"  کہ تمام  مسلما ن  با ہمی  مو دت  و محبت  اور  افت  و شفقت  ایک  جسم  کی طرح  ہیں  اگر  اس کا ایک  عضو  کسی تکلیف  میں مبتلا  ہو جا ئے تو پو را  جسم  اس کی  درد محسوس  کر تا ہے ۔(صحیح بخا ری : کتا ب الا دب )

احا دیث  میں  مسلما ن  کی شا ن  یہ  بتا ئی گئی  ہے کہ  وہ  کفا ر  کے  مقا بلے  میں  مسلما ن  کی مدد  کر ے گا  چنا نچہ  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   نے  فر ما یا :" کہ تمام  مسلما نوں کے خو ن  برا بر  ہیں  اور وہ  اپنے علا وہ  کفا رہ  کے خلا ف یک  جا ن ہیں ۔ (مسند امام  احمد  رحمۃ اللہ علیہ :2/215)

نیز رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   نے فر ما یا :"  کہ اے اللہ  کے بندو ! آپس  میں بھائی  بھا ئی بن جا ؤ۔ (صحیح بکا ری : الادب 6064)

کیا یہ اخو ت  اسلا میہ  کا تقا ضا  ہے کہ عراقی  مسلما ن  جوا ب  امریکی  غلا می  کے خلا ف  آزا دی  کی جنگ  لڑ  رہے  ہیں   اس مشکل  وقت  میں  مدد کی بجائے  ان  کے خلا ف  دشمن  کی مدد  کے لیے  فو ج  بھیجی  جا ئے  اور ان  کے تا زہ  زخمو ں  پر  نمک  پاشی  کی جا ئے  ہما ر ے  پا شی  کی جا ئے  ہما ر ے  نزدیک  آزادی  کی  جنگ  لڑنے  وا لے  عرا قی  مجا ہدین  کے خلا ف  غا صب  امر یکہ  کی مدد  کے لیے  افوا ج  بھیجنا  حرا م  ہے اور  یہ اقدا م  ملی  غیر ت  کا جنا زہ  نکا لنے  کے مترا دف  ہے  ہمیں  سو چنا  چا ہیے  کہ اگر  ہم اپنے  جوانوں  کو کسی  اسلا می  ملک  مین اس مقصد  کے لیے  روا نہ  کر تے  ہیں  کہ وہ آزادی  کی جنگ  لڑنے والو ں کے خلا ف امر یکہ کے مفا دا ت کا تحفظ  کریں  اور اس کے احکا م  بجا لا ئیں  تو ایسی  حکمت  عملی  اسلا می  نقطہ  نظر  سے ایک المیہ  سے کم نہ ہو گی  یہ کیسے  ہو سکتا  ہے کہ ایک  مسلما ن  فو جی  دو سرے  مسلمانوں  کے قتل  میں حصہ  دار  بنے  اگر  ایسا  ہوا تو  اس کا  مطلب  یہ ہے  کہ ہماری  دوستی دشمنوں  سے ہے ایسے  حا لا ت  میں  قرآن  کا فیصلہ  یہ ہے  کہ جو دشمنوں  سے  دوستی  رکھتا  ہے وہ انہیں میں  سے ہے ۔(5/المائدہ :51)

رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   نے اس قسم  کے قو می  جر م  کے مر تکب   کا جنا زہ  نہیں  پڑھا  جیسا  کہ ما ل  غنیمت  سے  چو ر ی  کر نے  والے  کے  متعلق  احا دیث  مین آیا  ہے اس بنا  پر  ہما ر ے  حکمرا نو ں  کو  سو چنا  چا ہیے  کہ  ہما ر ی  افواج  کو مسلما نوں  کے خلا ف  لڑتے  ہو ئے  مر نے  کی  صورت  میں  انہیں  مسلما نوں  کی دعا ؤں  اور ان  کے جنا زوں  سے محروم نہ  کر یں ۔

(2)دین اسلام  کا مزا ج  ہے  کہ وہ  اس عا لم  رنگ  وبو  میں  ادیا ن  با طلہ  میں غا لب آنے  کے لیے  آیا  ہے جیسا کہ ارشا د با ر ی تعا لیٰ ہے  اللہ  وہی  ہے جس نے اپنے  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم کو ہدا یت اور سچا  دین دے کر بھیجا  تا کہ  اسے  تمام  مذا ہب  پر غا لب  کر دے ۔(61/الصف:9)

اس کا  مطلب   یہ ہے  کہ اللہ تعا لیٰ  اس دین  اسلا م کو آفا ق  میں پھیلا نے  والا  اور دوسرے  تمام  ادیا ن  با طلہ  پر غا لب  کر نے وا لا  ہے یہ غلبہ  دلائل  کے لحا ظ  سے ہو  یا  ما دی   وسا ئل  کے اعتبا ر  سے بہر حا ل  اس کے  مزا ج میں مغلو ب  ہو نا  نہیں ہے  یہی وجہ  ہے کہ  دین اسلا م  اپنی  پا لیسی  کے پیش نظر  سب سے پہلے اہل کفر  دعوت  دیتا ہے  کہ اسے قبول  کر لیا  جائے  اگر اسے قبول  کر لیں  تو ان  کے  حقوق  دوسرےمسلما نوں  کے برابر  ہیں  انکا ر  کی صورت  میں ان  کے سا منے  دور  استے  پیش  کر تا  ہے اگر  تم نے کفر  نہیں چھوڑ نا  تو جز یہ دے کر ہما ر ی  ما تحتی  قبو ل  کر لو  اس طرح  انہیں  دنیا  میں زندہ  رہنے  کا حق  ہے  اگر ما تحتی  قبو ل نہ کر یں  تو پھر  انہیں  اس عا لم  رنگ  و بو   میں  زندہ  رہنے  کا حق نہیں ہے  ارشا د با ر ی  تعالیٰ ہے  :" ان  لو گوں سے لڑو  جو اللہ  پراور قیا مت  کے دن  پر ایما ن  نہیں لا تے جو اللہ اور اس کے رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کی حرا م  کردہ چیزوں  کو حرا م  نہیں جا نتے  نہ دین  حق  کو قبو ل  کر تے  ہیں  ان لوگوں  میں سے  جنہیں  کتا ب  دی گئی ہے  تاآنکہ  وہ ذلیل و خوا ر  ہو کر  اپنے ہا تھوں  سے جز یہ  ادا کر یں ۔(9/التو بہ :29)

اس سے پہلے  اللہ تعا لیٰ  نے اہل  اسلا م  کو مشر کین  سے قتا ل  عا م کا حکم دیا ہے  اس کے  بعد  اس آیت  کر یمہ میں یہو د  نصا ریٰ  سے قتا ل کا حکم  دیا  جا رہا  ہے  اگر  یہ لو گ  اسلا م  قبو ل  نہ کر یں توانہیں  جز یہ  دے  کر مسلمانوں  کی ما تحتی  میں رہنا  ہو گا۔اس میں کو ئی  شک  نہیں  ہے  کہ اسرائیل  کا  و جو د مسلما نوں کے خلا ف ایک  گہر ی  سا ز ش  کا نتیجہ  ہے  مسلمانوں  کے خلاف  منصو بے  بنا نا اور ا نہیں  عملی  شکل  دینا  اس  کا  نصب العین  ہے  دیگر  کفر  کی حکو متیں  اس کے   مفا دات  کا تحفظ کر تی  ہیں  اس کے وجود کو تسلیم  کر نا  ایسا  ہے  کہ گو یا مسلما نوں  کے خلا ف  اس کی چیرہ  سستیوں کو آہنی  تحفظ  دینا ہے قبلہ اول  پر غا صبا نہ قبضہ  اور فلسطینی  مسلمانوں  کو آتش  و آہن  کی با ر ش  سے تہس نہس  کر نا  اس  کے مکرو ہ عزا ئم  کی عکا سی  کر تا  ہے پس  پردہ  کفر  کی یہ  سا ز ش  ہے اہل  پا کستا ن  اسرا ئیل  کو تسلیم  کے بعد  خو د بخو د  عر ب مسلما نوں  سے کٹ  جا ئیں  گے اور انہیں  نفرت  کی نگاہ  سے دیکھا  جائے  گا لہذا  کفر  کی اس سا زش  سے  ہمیں  ہر وقت  آگا ہ رہنا چا ہیے۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اصحاب الحدیث

ج1ص498

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)