فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 11845
(545) لڑکی کی تنخواہ گھریلو استعمال میں لانا
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 18 May 2014 03:12 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

میر ی  لڑکی  لیڈی  ٹیچر  کی حیثیت  سے سکو ل  میں تعنیا ت  ہے  سسرا ل  وا لو ں  کا مطا لبہ  ہے کہ  پو ر ی  تنخو ا  ہ  ہمیں  دیا کرو  جبکہ  اس کا خاوند  کسی فیکٹری  میں  معقول  تنخو اہ  پر  ملا ز مت  کر تا  ہے کیا  لڑکی  کی تنخوا ہ  گھر  کے اخرا جا ت  کے لیے  وصول  کی جا سکتی  ہے ؟(محمد صا دق  راولپنڈی  خریداری نمبر 3317)


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

شر عی  طو ر  پر لڑکی  اپنی  ملا ز مت  کے دورا ن  ملنے  وا لی  تنخو اہ  کی  خو د  ما لک  ہے  وہ اپنی  مر ضی  سے گھر  کے  اخرا جا ت  کے لیے صرف کر سکتی  ہے سسرا ل  والوں کو یہ حق  نہیں پہنچتا  کہ وہ اسے وصو ل  کر نے کے لیے  اس پر  دبا ؤ ڈا لیں  یا بزور وصول  کر یں  خا و ند  کو یہ  حق پہنچتا  ہے کہ وہ ملا ز مت  نہ کرا ئے  لیکن  وہ بھی  زبر دستی  تنخو اہ نہیں وصول کر سکتا  اس سلسلہ  میں  ہما را  مشورہ  یہ ہے  کہ اس مسئلہ کو زیا دہ  طو ل  نہ دیا  جا ئے  بلکہ گھر  میں بیٹھ کر  اسے  افہا م  و تفہیم  کے ذر یعے حل کیا جا ئے  لڑ کے  کے وا لدین  کو خو ش  اسلو بی  سے اس معا ملہ  میں قا ئل  کیا جا سکتا ہے  لیکن لڑکی  کو بھی  اس کے متعلق  غو ر  کر نا ہو گا  کہ کہیں  دنیا  کی یہ دولت  اس کی بربادی  کا با عث  نہ بنے  اصل با ت   گھر  کی آ با دی  ہے اس پر کسی  صورت  میں آنچ  نہیں آنا چا ہیے ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اصحاب الحدیث

ج1ص493

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)