فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 11830
(530) باغ فدک کی حقیقت
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 18 May 2014 01:22 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ہا رو ن آبا د سے  محمد  اکر م  در یا فت  کر تے ہیں  کہ :

(1)با غ فدک کی حقیقت  اور اس کی شر عی  حیثیت  کیا ہے ۔؟

(2)عبا س  علمبر دار  کے جھنڈے  اٹھا نا  جا ئز  ہیں  یا نا جا ئز ؟

(3)شر ک  کیا ہے اور اس میں کو نسی  کو نسی  چیزیں  شا مل ہیں ؟

(4)قل خوانی  ساتواں  اور چا لیسواں  کی شرعی  حیثیت  کیا ہے  واضح  کر یں

(5) ایک آد می  متعدد  دفعہ  قسمیں  اٹھا کر  انہیں  تو ڑ  دیتا  ہے ان  حا لا ت  میں  کفا رہ  کیسے  ادا ہو گا ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

شمالی   حجا ز  میں  واقع  خیبر  کے قر یب  فدک  ایک  بستی  کا نا م  ہے  جو  پا نی  کے قدرتی  چشموں  اور  کھجوروں  کے با غا ت  پر مشتمل  تھی  خیبر  کی طرح  اس میں  بھی یہود  ی کاشتکا ر  آبا د  تھے  جب خیبر  فتح  ہوا  تو فدک  کے با شندوں  نے رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   سے درخو است  کی کہ اگر  آپ ہمیں  امان  دے  دیں  تو  ہم   اپنی جملہ  جا ئیداد  چھو ڑکر  یہا ں  سے کہیں  اور چلے  جاتے  ہیں  آپ نے  ان  کی درخو است  کو منظو ر  فر ما لیا  اس طرح  یہ گا ؤں  کسی قسم  کی جنگی  کا روا ئی  کے بغیر فتح  ہو گیا  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   اس کی پیداوار  سے اپنے  اہل  و عیا ل  کے اخرا جا ت  اور دیگر  ذاتی  ضروریا ت  کو پو را  کر تے  اور با قی  اللہ  کی راہ  میں صرف  کر دیتے  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کی وفا ت  کے بعد  فد ک  کی زمین  اور اس  کے با غا ت  کے متعلق  حضرت فاطمہ  رضی اللہ  تعالیٰ عنہا  نے حضرت ابو بکر صدیق  رضی اللہ  تعالیٰ عنہ   سے تقا جا  کیا  کہ فدک  کا خطہ  میرے  وا لد  بزرگو ار  کی میرا ث  کے طور  پر  میر ے  حوالے  کیا جا ئے  حضرت ابو  بکر صد یق  رضی اللہ  تعالیٰ عنہ   نے آپ  کے مطا لبہ کو رسو ل  اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کے ایک ارشا د  کے پیش  نظر  تسلیم  نہ کیا  آپ  نے بطو ر  دلیل  فر ما ن  نبوی  پیش  کیا  ہما را  کو ئی  وارث  نہیں  ہو گا  ہم نے  جو کچھ  بھی  چھو را  ہے صدقہ  ہے ،بخا ری :کتا ب  فرض  الخمس )

حضرت  ابو بکر  صدیق   رضی اللہ  تعالیٰ عنہ   نے مزید  فر ما یا :'  کہ اس خطہ  کی پیداوار  اسی مصرف  میں استعمال  ہو گی  جس  میں  خو د رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   استعما ل  فرما یا کر تے تھے  اہل  بیت  کی ضرور یا ت  کو حسب  سا بق  پو را  کیا جا تا  رہے  گا  حضرت فا طمہ  رضی اللہ  تعالیٰ عنہا   نے اس اصولی  مو قف  سے اتفا ق  نہ کیا بلکہ  کبیدہ  خا طر  ہو ئیں  بالآخر  حضرت ابو بکر صدیق  رضی اللہ  تعالیٰ عنہ   آپ  کی تیمار داری   کے لیے  ان کے گھر تشریف  لے  گئے  اور  حضرت  فا طمہ  رضی اللہ  تعالیٰ عنہا  کو را ضی  کر لیا

   (2)عبا س علمبر دار  کے جھنڈے  اٹھا کر  مخصوص  دنوں میں گھو متے  پھر  نا  یہ تما م  ایک خا ص  مکتبہ  فکر  کی شعبد  با زیاں  ہیں جو سا دہ لو ح  مسلمانوں  کو پھا نسنے کے لیے  عمل  میں لا ئی  جا تی ہیں  تا کہ ان کے سا منے  اہل بیت  کے ساتھ  اپنی  خو د سا ختہ  محبت  کا اظہار  کر کے  ان کے  جذبا ت  سے کھیلا جا ئے  واضح  رہے  کہ یہ سب  کچھ  دینداری  کی آڑ  میں کیا جا تا ہے جس پر کتا ب  و سنت  سے کو ئی  دلیل  نہیں  دی  جا تی  لہذا  ایسا کر نا نا جا ئز ہے  مسلما نوں  کو اس قسم  کی بدعا ت  سے اجتنا ب  کر نا  چا ہیے

(3)شرک کا لغوی  معنی حصہ داری ہے اور اس کی حقیقت یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ کی ذات  و صفا ت اور حقوق  و اختیا را ت  میں کسی طور پر غیر  کو شر یک  کر نا یا اس کا عقیدہ رکھنا شر ک  ہے اس کی مز ید  وضا حت  یہ ہے  کہ جو  چیزیں  اللہ تعا لیٰ  نے اپنے  لیے  خا ص  کی ہیں  اور انہیں  اپنے  بندوں  کے لیے نشا ن  بندگی  ٹھہرا یا  ہے انہیں  کسی  اور کے لیے  ثا بت  کر نا  شر ک  ہے مثلا سجدہ  کر نا  نذر  ماننا  مشکل کے وقت   پکا ر  نا کا ئنا ت  میں میں ہر قسم  کے تصر فا ت  کی طا قت  رکھنا یعنی  اللہ کے علا وہ کسی دوسرے کو داتا حا جت روا مشکل کشا غر یب نوا ز گنج  بخش بگڑی بنا نے اور تقدیر  سنوار  نے  والا  خیا ل  کر نا شر ک  اکبر  کے زمرے میں آتا ہے جو خا لص  تو بہ  کے بغیر  معا ف نہیں ہو گا ریا کا ری  اور غیر  اللہ  کے نا م  پر قسم  اٹھا نا  بھی شرک ہے لیکن اسے شر ک   اصغر کہا گیا ہے  اللہ تعا لیٰ  نے تما م  انبیا ء  علیہ السلام  کو تو حید  پھیلا نے  اور شر ک  مٹا نے  کےلیے  بھیجا اللہ تعا لیٰ اس سے ہمیں محفو ظ  رکھے ۔

(4)ان رسو ما ت  کی کو ئی شر عی  حیثیت  نہیں ہے  بلکہ  اس قسم کے جملہ  امور  بد عا ت  میں شا مل ہیں کیوں کہ  انہیں دین  کا حصہ سمجھ  کر اور  ثوا ب  کی نیت  سے کیا جا تا ہے نبی کر یم  صلی اللہ علیہ وسلم  یا صحا بہ کرا م   رضوان اللہ عنہم اجمعین   سے کو ئی ایسا ثبو ت  نہیں ملتا  جو ان  کا مو ں  کی بجا آوری  کے لیے بطو ر  دلیل پیش کیا  جائے  نبی کر یم  صلی اللہ علیہ وسلم  کا فر ما ن  ہے کہ جو کوئی  ایسا کا م کر تا ہے  جس پر ہماری  طرف سے مہر  تصدیق  ثبت  نہیں  وہ مر دود  ہے اس بنا پر  یہ بد رعات  ایجا د  بند ہ    ہیں  ہر مسلما ن  کو اس سے اجتنا ب  کر نا  چا ہیے  ۔

(5)اگر ایک ہی  معا ملہ کے لیے متعدد  قسمیں  اٹھا تا ہے تو ایک  ہی قسم  کا کفا رہ   ادا  کر نا  ہو گا  خوا ہ  مجلس  ایک  ہو یا  متعدد  کیوں  کہ اس  صورت  میں قسم  پہلی  ہی ہے  با قی  تا کید  کے طو ر  پر ہیں  لیکن  اگر  واقعا ت  مختلف  ہیں جن کے لیے  قسمیں اٹھا تا  ہے تو اگر  انہیں  تو ڑے گا اتنی  ہی دفعہ  کا کفا رہ ادا کر نا  پڑے گا  قرآن  کر یم  کی وضا حت  کے مطا بق  قسم  تو ڑ نے  کا کفا رہ یہ ہے  کہ دس  محتا جوں  کو اوسط  درجے  کا کھا نا  کھلا یا  جا ئے  جو عا م طو ر  پر اپنے  اہل و عیا ل  کو کھلا یا  جا تا  ہے   یا دیں  مسا کین  کو کپڑے  دئیے  جائیں  یا ایک  غلا م  آزاد کیا جا ئے یا اگر  ان سے کو ئی بھی میسر  نہ ہو  تو  تین  دن  کے رو زے  رکھے  جا ئیں  ۔(5/ الما ئدہ : 89)

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اصحاب الحدیث

ج1ص479

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)