فتاویٰ جات: تعلیم وتعلم
فتویٰ نمبر : 11825
(525) دینی مدرسہ کو لوگوں کی عدم دلچسپی کی وجہ سے بدلنا
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 18 May 2014 01:03 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

گو جرا نو الہ  سے قا ر ی  حفیظ  الر حمن  اطہر  لکھتے ہیں  کہ ایک دینی مدرسہ  کو لو گو ں  کی عد م  دلچسپی  کی وجہ  سے سکو ل  میں  بد ل دیا  گیا ہے  جہاں  اردو  انگر یزی  حسا ب  سا ئنس  اور کمپیو ٹر  کی تعلیم  کے سا تھ  صحا ح ستہ  کے منتخب  ابو اب  اور قر آن کریم  کے تر جمہ  و تفسیر  کی  تعلیم  بھی دی  جا تی ہے  اب  بعض  طلبا  فیس  ادا کر نے  سے قا صر  ہیں  کیا زکو ۃ  چر مہا ئے  قربا نی  اور  فطرا نہ  و عشر  وغیرہ  سے اخرا جا ت  کو  پو را  کیا جا سکتا  ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

صورت مسئولہ  میں لو گو ں  کی عد م  دلچسپی  کی وجہ  سے  ایک  دینی  مدر سہ  کی عما ر ت  کو عصر  ی سکو ل  میں  تبد یل  کر دیا  گیا  ہے    چو نکہ  ادارہ  ہذا  ایک سکو ل  ہے اور بنیا دی  تعلیما ت  کو ہی  اولین  حیثیت  حا صل  ہے دینی  تعلیما ت  ثا نو ی  حیثیت  میں  ہیں  وہ  بھی صحا ح  ستہ  کے منتخب  ابوا ب  اور  قرآن  مجید  کے تر جمہ  و تفسیر  کی  حد  تک  ہیں  اگر  چہ  دینی  تعلیم  کے ساتھ  دنیا  وی  تعلیم  کی پیوندکا ر ی  کے تجر با ت  پہلے  بھی  ہو ئے  ہیں اور اب بھی  انہیں  تختہ  مشق  بنا یا  جا رہا  ہے  ہما را  تجر بہ  یہ ہے  کہ اسلا م  کی سر  بلندی  کے لیے  دینی  علو م  میں  جو گہرا ئی اور گیرا ئی  در کا ر  ہے  وہ اس  طرح   حا صل  نہیں  ہو تی  تا ہم  مسئلہ  کی  حد  تک  ہما را  مو قف  یہ ہے  کہ موجو د ہ دور  کے  کا لج  اور سکو ل  مصا ر ف  زکو ۃ  سے خا ر ج  ہیں مدا رس  دینیہ  جن  میں  خا لص  قرآن  و حدیث  کی تعلیم  دی جا تی  ہے انہیں  بھی  کھینچ  تا ن  کر فی سبیل  اللہ  کی  مد  میں دا خل  کیا جا تا  ہے تا ہم  غر یب  اور نا دار  طلبا  کو زکوۃ  دینا  نص قطعی  سے ثا بت  ہے خو اہ  وہ دینی   مدارس  میں  زیر  تعلیم  ہو ں  یا کا لج  میں  پڑھتے  ہوں  اس میں  تو اختلا ف  کی قطعاً کو ئی  گنجا ئش  نہیں  ہے ارشا د  با ر ی  تعا لیٰ  ہے :"یہ صد قا ت  تو درا صل  فقیروں  اور مسکینوں کے  لیے ہیں ----(9/التو بہ : 60)

لہذا  غریب طلبا  کی  امداد زکو ۃ  صد قا ت  چر  مہا ئے  قر با نی عشر  اور  فطرا  نہ  وغیرہ  سے کی  جا سکتی  ہے جس  کی صورت  یہ ہو  کہ سکو ل  کی انتظا میہ زکوۃ و صدقا ت  کو جمع  کر ے اور جو طلبا غریب  اور  نا دار  ہیں ان کا ما ہا نا  وظیفہ مقرر  کر دے تا کہ وظیفہ   سے اپنی  یو نیفا ر م  اور فیس  وغیرہ کی ادائیگی  کا بند و بست  کر یں  اس جمع  شدہ  زکو ۃ  و خیرا ت  سے سکول  کی عمارت  اسا تذا ہ  کی تنخو اہ اور دیگر  اخرا جا ت  نہ پو رے  کیے جا ئیں  کیوں  کہ مصا ر ف  زکو ۃ   میں سے اس قسم  کا کو ئی  مصروف  قرآن  و حدیث  میں بیا ن  نہیں ہو ا ہے  اگر  مصا رف  زکو ۃ  کے لیے  اس قسم  کے دروا زے  کھولنے  کی اجا زت  دے دی  جا ئے  تو ہر  کتہرے  مہتر ے  کو ما ل زکو ۃ  سے اپنی  ضروریا ت  پو ری  کر نے کے لیے سند  جو از مل جا ئے  گی  جو قرآن  و حدیث  کے منا فی  ہے اس لیے  ضروری  ہے کہ  انہیں  صرف قرآن  و حدیث  میں  بیا ن شدہ مصا رف  تک  محدو د  رکھا  جا ئے ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اصحاب الحدیث

ج1ص475

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)