فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 11810
(510) گم شدہ انسان کا سامان بطور امانت رکھا ہے
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 18 May 2014 10:41 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

 لاہور سےمحمد یٰسین طہ(خریداری  نمبر3424) لکھتے ہیں  کہ ہمارے  ایک دوست چند سال سے پر اسرار طورپر غائب ہیں تا حال ان کے متعلق کوئی خبر  مو صول  نہیں ہو ئی  اس کے  کچھ  کپڑے  وغیرہ  میر ے  پا س  بطو ر  امانت  مو جو د ہیں جن کے بو سیدہ  اور  ضا ئع  ہو نے  کا اندیشہ ہے کیا  یہ پا رچہ جا ت  کسی ضرورت  مند کو دئیے جا سکتے ہیں ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

امام بخا ری  رحمۃ اللہ علیہ  نے اپنی صحیح  میں ایک عنوان  با یں  الفا ظ  قا ئم  کیا ہے  مفقو د  الخبر  کی بیوی  اور اس  کے ما ل  کا حکم  لیکن  اس کے متعلق  کو ئی  فیصلہ  نہیں فر ما یا  البتہ  آپ کا ر جحا ن  پیش  کر دہ احا دیث  و آثا ر  سے معلوم ہو تا ہے اس لیے کہا جا تا ہے کہ امام بخا ری کے عنوا نا ت  خا مو ش  مگر  ٹھو س  ہو تے ہیں  چنانچہ  اس سلسلہ  میں آپ  نے حجرت  عبد اللہ بن  مسعود  رضی اللہ  تعالیٰ عنہ  کا ایک اثر  پیش کیا  ہے کہ  انہوں  نے کسی  سے ایک لو نڈی  خرید ی  اس کی  قیمت  ادا  کر نے  سے پہلے  مالک  لا پتہ  ہو گیا  ایک سا ل  تک  اسے  تلا ش  کیا لیکن  وہ نہ مل  سکا  پھر آپ نے اس لو نڈی  کی قیمت  کو بطو ر  صدقہ  خرچ  کر دیا  اور فر ما یا  اگر اس  کا ما لک  مل گیا  تو اسے  قیمت ادا کر دوں گا اور صدقہ  کے ثوا ب  کا خو د حقدار  ہو ں گا  اگر  وہ اپنی  طرف  سے صدقہ  کر دے  تو اس کی صوابد ید  پر  ہے ۔(فتح  البا ری : 9/532)

حضرت ابن عباس  رضی اللہ  تعالیٰ عنہ   سے بھی اسی طرح  منقول  ہے ان تمام  حضرات  نے مفقو دا لخبر  کے ما ل  کو گر ی  ہو ئی  چیز پر  قیا س  کر تے ہو ئے  یہ فیصلہ  دیا ہے  کہ سال  تک  اس کا انتظا ر کیا جا ئے  اگر نہ مل سکے تو وہ ما ل  اس کی طرف سے صد قہ  کر دیا  جا ئے  اگر اس کے بعد  وہ مل  جا ئے  تو صد قہ  کا اجر  ما ل  لینے  کا اختیار  دیا  جا ئے  صورت مسئو لہ  میں مفقو دالخبر  کے کچھ  کپڑے  وغیرہ  بطو ر  امانت سا ئل  کے پا س مو جو د ہیں  جن کے بو سیدہ  اور ضا ئع  ہو نے  کا بھی  اند یشہ  پیش  کردہ  تصریحا ت  کی روشنی  میں یہی  فیصلہ  دینا  منا سب  ہے کہ  ملبو سا ت  کی قیمت  کا حساب  اپنے  پا س رکھ لیا جا ئے  اور لا پتہ  دوست  کی طرف  سے ان پا ر چہ  جا ت  کو مسا کین  اور ضرورت  مند  پر صد قہ  کر دیا  جا ئے اگر گم شدہ شخص صد قہ کر نے کے بعد  واپس آجا ئے  تو اختیا ر  دیا جا ئے  اگر صدقہ  بحا ل  رکھے  تو عند  اللہ ثواب  کا حقدار  ہو گا اگر  اپنے کپڑو ں  کی قیمت  لینا چا ہے  تو اسے  قیمت  دے دی  جائے  اور صدقہ  کے ثواب کا حقدار وہ شخص ہو گا  جس  کے پا س کپڑے  بطو ر  امانت  پڑے  تھے  اور اس نے مسا کین  کو دے  دئیے  تھے ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اصحاب الحدیث

ج1ص463

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)