فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 11789
(490) انفاق فی سبیل اللہ
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 17 May 2014 03:29 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

بھا ئی پھیرو (پھو ل نگر ) سے  رب نوا ز  لکھتے ہیں  کہ سکو ل  میں ایک  واٹر  پمپ  سر کا ر ی  فنڈ  سے لگا یا گیا کچھ  رقم  سکو ل  کے  بچو ں  نے خرچ  کی ہے  البتہ  بجلی  کا بل  بچو ں  کے فنڈ  سے ادا کیا جا تا ہے  کیا اوقا ت  تعلیم  میں اسا تذہ  اور اوقات  تعلیم  کے علا وہ دیگر ملا ز مین  اس پا نی  کو استعما ل  کر  سکتے  ہیں ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

واضح رہے  کہ صورت  مسئولہ  میں یہ واٹر پمپ  رفا ہ عا مہ  کے ضمن میں آتا ہے اس لیے  اوقا ت  تعلیم  میں  اسا تذہ  اور اس کے علا وہ  دیگر  سر کا ری  ملا زمین  اسے استعما ل  کر سکتے ہیں بشر طیکہ اس استعما ل سے  بچو ں  کی ضرورت  متا ثر  نہ ہو ں  جن کے لیے  وہ واٹر  پمپ  لگا یا گیا ہے جیسا کہ  رفا ہ عا مہ  کی دوسری  چیزیں  ان  کے استعما ل  میں آتی  ہیں  اگر  پا نی  ضرورت  سے زا ئد  ہو تو  عا مۃ  النا س  بھی  استفا دہ  کر سکتے ہیں  اس  میں شرعاً  کو ئی  حر ج  نہیں  سا ئل  کی حسا س  طبیعت  کے پیش نظر  یہ عر ض  کر نا  ہم  اپنی ذمہ  داری  خیا ل  کر تے ہیں  کہ جب  زند گی  میں  پیش  آمد ہ چھو ٹے  چھوٹے  مسا ئل  کے متعلق  ہم  شر یعت  سے را ہنما ئی  لیتے ہیں  تو بڑے بڑے مسا ئل کو  کسی صورت  میں نظر  اندا ز  نہیں  کر نا چا ہیے  اس پر  فتن  دور  میں  استا د  کی شخصیت  انتہا ئی  اہم  کردار  کی حا مل  ہے  اس کی  سب سے  بڑی  ذمہ  داری  یہ ہے  کہ  نو نہا لا  ن  قو م  کی اس  نہج  پر    تر بیت  کر ے  کہ مستقبل میں یہ ملک  و ملت  کے ؛لیے  دینی  اور  دنیا  وی  طو ر  پر صحیح  راہنما  بن سکیں  خو د  غر ضی  اور مفا دپر ستی  کے بت  کو یہ  ہمیشہ  کے لیے  پا ش پش  کر دیں  اس کے علا وہ  سکو ل  کی چا ر  دیو ار  ی  کے اندر  شر عی  پا بندی  ہو سکتی ہے  اس کی طرف  خصوصی  تو جہ  دی  جا ئے  کیو ں  کے آپ  ان  کے  پا سبا ن  ہیں  اور قیا مت  کے دن  اس پا سبا نی  کے متعلق  سوال  کیا جا ئے گا ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اصحاب الحدیث

ج1ص447

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)