فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 11784
(485) شب برات کی شرعی حیثیت
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 17 May 2014 02:54 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ٹھٹھہ حسن سے محمد  اسما عیل  ربا نی خریدا ری  نمبر  6199لکھتے ہیں  کہ شب  برا ءت  کے متعلق  وضا حت  کر یں  کہ اس کی  شر یعت  میں کیا حیثیت  ہے کیا اس  دن  روزہ  رکھنا  چا ہیے ۔


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

بعض  نا قا بل  حجت  روا یا ت  کی بنا پر لیلۃ مبا ر کہ  سے  مرا د  ما ہ شعبا ن  کی پندرھو یں  رات  مراد لی  گئی  ہے جس  کا نا م  لو گو ں  نے شب برا ءت   رکھا  ہے پھر ستم با لا  ئے ستم  یہ ہے  کہ جس  قدر  فضا ئل  و مناقب  لیلۃ القدر  کے متعلق  احا د یث  میں  وارد  ہیں  ان تمام  کو شب  براءت  کے کھا تے  میں  ڈا ل  کر اسے  خو ب  روا ج  دیا گیا  ہے رسو ل اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   سے ما ہ شعبا ن  کے متعلق  مندرجہ  ذیل  طر ز عمل  منقو ل  ہے ۔

(1)حضرت  عا ئشہ  رضی اللہ  تعالیٰ عنہا  بیان  کر تی  ہیں  کہ میں  نے رسو ل اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کو ما ہ شعبا ن  میں بکثرت  رو زے  رکھتے  دیکھا  ہے ۔(صحیح بخا ر ی : الصوم ۔1969)

(2)حضرت ام سلمہ  رضی اللہ  تعالیٰ عنہا  سے مرو ی  ہے کہ رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  ما ہ  شعبا ن  کے پو ر ے  رو زے  رکھتے  حتی  کہ اسے  ما ہ رمضا ن  سے ملا  دیتے ۔(ابو داؤد :الصوم ۔2336)

شعبا ن کی پند رھو یں  تا ر یخ  کو صر ف  ایک روزہ  رکھنا  جا ئز نہیں ہے اسی طرح  شب  برا ئت  کے قیا م  کی بھی  کو ئی شر عی  حیثیت  نہیں ہے ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اصحاب الحدیث

ج1ص442

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)