فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 11783
(484) شب برات (شعبان کی پندرھویں رات)
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 17 May 2014 02:51 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

بدو ملہی  چو دہری  بشیر  احمد  ملہی  (خریداری نمبر2244) لکھتے ہیں  کہ غنیۃ  الطا  لبین   میں شعبا ن  کی پندر ھو یں  را ت  یعنی  شب  برا ت  کے متعلق  لکھا  ہے کہ اس را ت  آیندہ  سا ل  کی پیدا ئش  وا موا ت  لکھی  جاتی ہیں  اور اس میں رز ق  بھی تقسیم  ہو تا ہے  ہر سا ل  ایسا  ہو تا ہے  جبکہ  ہر انسا ن  کی قسمت  کا فیصلہ  یعنی  مو ت  و حیا ت  اور رزق  وغیرہ  کے متعلق  اللہ تعا لیٰ  نے پہلے  طے  کر رکھا  ہے وضا حت  فر ما ئیں  اس کے  علا وہ  اس رات  سو ر کعت  پڑھنے  کے متعلق  بھی لکھا ہے  کہ ہر  رکعت  میں دس  دس  مر تبہ  سو ر ۃ  اخلا ص  پڑ ھی  جا ئے  اسے  صلو ۃ  خیر  کہتے ہیں اس کا اہتمام  کرنے  سے بر کت  پھیلتی  ہے  مز ید  فر ما یا  کہ ہما ر ے  اسلا ف  اس نما ز کو جما عت  کے  سا تھ  پڑھتے  تھے  اس کی فضیلت  بیا ن کی گئی  ہے کہ اس نما ز  کی وجہ  سے اللہ تعا لیٰ  ستر  با ر  نظر  رحمت  سے دیکھتا  ہے  اور ہر  با ر دیکھنے  سے  انسا ن  کی ستر  حا جتیں  پو ری  ہو تی ہیں  اس کے متعلق  تفصیل  سے لکھیں  ، ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

قرآن  کر یم  میں ہے :" کہ ہم نے اس قرآن کو لیلہ  مبا رکہ  یعنی  خیرو بر کت  وا لی  را ت  میں نا ز ل کیا ہے  کیو ں  کہ ہمیں  اس سے  ڈرا نا  مقصو د  تھا  اس را ت  ہما ر ے  حکم  سے ہر  معا ملہ  کا حکیما  نہ  فیصلہ  کر دیا جاتا ہے ۔ (44/الدخا ن 3۔4)

اسی را ت کو دوسرے  مقا م  پر لیلۃ القدر  کہا  گیا ہے کہ  اس را ت  کو بڑے  اہم  امو ر  کے فیصلے  کیے  جا تے ہیں  ارشا د با ر ی  تعا لیٰ  ہے اس رات  ملا ئکہ  اور جبرا ئل  اپنے  پر وردگا ر  کے اذن  سے ہر  طرح  کا حکم  لے اتر  تے  ہیں ۔ (97/القدر :4)

اس کا مطلب یہ ہے  کہ اس را ت  اللہ تعا لیٰ  افرا د   دا قوام  کی قسمتو ں  کے فیصلے  کر کے  انہیں  نا فذ  کر نے  کے لیے  اپنے  فر شتو ں  کے حو لے  کر دیتا  ہےپھر وہ سا ل بھر اللہ کے  فیصلے  کے مطا بق  عمل  در آمد  کر تے رہتے ہیں  احا دیث  میں اس  را ت کے متعلق  صرا حت  ہے کہ ما ہ ر مضا ن کے آکر ی عشر ہ  کی طا ق را تو ں  میں آتی  ہے  مگر  بعض  نا قا  بل  حجت  روا یا ت  کی بنا پر نہیں  دو الگ الگ  را تیں  قرار  دیا  گیا ہے  لیلۃ القدر  سے مرا د ر مضا ن  کے آخر ی  عشرہ  وا لی را ت  اور لیلۃ  مبا ر کہ  سے ما ہ  شعبا ن  کی پندرھویں  را ت  مرا د  لی گئی  ہے جس  کا نا م  شب  برا ءت  ہے پھر  ستم  یہ ہے  کہ جس  قدر  فضا ئل  و منا قب لیلۃ القدر  کے متعلق  احاد یث  میں  وا رد  ہیں  ان تمام  کو شب  برا ءت  کے کھا تے  میں ڈا ل کر  اسے خو ب  روا ج  دیا  گیا ہے  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   سے  ما ہ  شعبا ن  کے متعلق  یہ منقو ل  ہے کہ  آپ  صلی اللہ علیہ وسلم  اس مہینے  کے رو زے  بکثرت  رکھتے  تھے  با قی  اس را ت  آیند ہ  سال  کی پیدا ئش  و امو ات  لکھی  جا نے  وا لی  با ت  سر  سے غلط  ہے  اگر چہ تفسیر  ابن کثیر  میں حضرت  مغیر ہ  بن  اخنس  سے مرو ی  ہے کہ  اس را ت  شعبا ن  سے  شعبا ن   تک  لو گو ں  کی عمر  یں  لکھی  جا تی  ہیں ۔(تفسیر ابن کثیر :4/137)

لیکن  اس کے متعلق  آپ کا فیصلہ  بھی مذکو رہے کہ یہ مر سل  روا یت  صحیح  نصو ص  کے خلا ف  ہے بہر حا ل  ہر انسا ن  کی مو ت  و حیا ت  اور رزق  وغیرہ  کا فیصلہ  لیلۃ القدر  میں ہو تا  ہے  جو ما ہ  رمضا ن  کے آخری  عشرہ  میں ہو تی  ہے اگر چہ  یہ فیصلے  اللہ  کی تقدیر  میں پہلے  سے طے  شدہ  ہو تے  ہیں تا ہم  اللہ  تعا لیٰ  سا ل  بھر  کے فیصلے  فر شتو ں  کے حو الے  کر دیتا  ہے تا کہ  وہ  انہیں  اہل دنیا  پر نا فذ  کر یں  وا ضح  رہے  کہ اہل  علم  نے تقدیر  کی  چار اقسا م بیا ن  کی ہیں ۔

(1)تقدیر  ازلی :  اس سے مرا د  اللہ  کی  وہ تقدیر  ہے  جو زمین  و آسما ن کی پیدا ئش  سے پہلے  تحر یر کی گئی  ارشا د با ر ی تعا لیٰ ہے  :" کو ئی  مصیبت  ملک  پر یا  خو د  تم  پر نہیں  آتی  مگر  اس سے  پہلے  کہ ہم  اسے پیدا  کر یں  وہ ایک  خا ص وقت  میں لکھی ہو ئی تھی ۔(57/الحدیہ :22)

(2)تقدیر  عمری  یعنی   عمر  بھر  کی تقدیر  اس کی دو انو اع  ہیں ۔

(الف)عہد و پیما ن  کے وقت  لکھی  گئی  تقدیر  جس  کے متعلق  قرآن  میں ہے  جب آپ کے ر ب  نے اولا د  آد م  کی پشت  سے ان  کی  اولا د  کو نکا لا  اور ان  سے  اقرار  لیا  کہ کیا  میں تمہا ر ا رب  نہیں  ہو ں ؟  سب  نے جوا ب  دیا کیو ں  نہیں !  ہم سب  گو ا ہ  بنتے  ہیں تا کہ  تم لو گ  قیا مت  کے دن  یوں  نہ کہو  کہ ہم  تو اس سے محض  بے خبر  تھے ۔ (7/الاعرا ف :172)

(ب)شکم ما در  میں  تقدیر  عمر ی  کا بیا ن  حدیث  میں ہے  کہ قرار  نطفہ  کے چا ر  ما ہ  بعد  فر شتہ  اس کی  تقدیر  کو لکھتا ہے قرآن  میں ہے  کہ وہ تمہیں  خوب  جا نتا ہے جب  اس نے  تمہیں  مٹی  سے پیدا  کیا  اور جب  تم  اپنی  ماؤں  کے پیٹ  میں بچے  تھے ۔(53/النجم:32)

(3)تقدیر حو لی: جس میں سا ل  بھر کے فیصلے  ہو تے ہیں  یہ کا م لیلۃ  القدر  میں سر انجا م  پا تا  ہے جیسا  کہ پہلے  ذکر  ہو چکا  ہے ۔

(4)تقدیر یو می :  ہر روز  اس کے  تا زہ  فیصلو ں  کا نفا ذ جیسا  کہ ارشا د بار ی تعا لیٰ  ہے وہ ہر رو ز کا م  میں مصرو ف  رہتا  ہے ۔(55/الرحمن :29)

اس کا مطلب  یہ ہے  کہ اللہ تعا لیٰ  ہر رو ز  کسی کو بیما ر  کر رہا  ہے تو  کسی کو شفا  یا ب  کر رہا  ہے کسی  کو ما لد  بنا  رہا  ہے  تو کسی  ما لدا ر  کو فقیر  کر رہا  ہے کسی  کو گد ا  سے  شا ہ  اور شا ہ  سے گدا  الغر ض  کا ئنا ت  می یہ  سا ر ے  تصرف  اس کے  امراور اس کی مشیت  سے ہو ر ہے  ہیں کا ئنا ت  میں کو ئی  لمحہ  ایسا  نہیں  ہے جو  اللہ تعا لیٰ  کی  کا ر  گزا ر ی  سے  خا لی  ہو  ما ہ  شعبا ن  کی پند ھو یں  را ت  کے متعلق  جو  صلو ۃ  خیر  بیا ن  کی جا تی ہے اسکے  متعلق ملا علی  قا ری  حنفی  لکھتے ہیں  :" شب  برا ء ت  میں  سو رکعت  نما ز با جما عت  یا انفرا دی  طو ر  پر اس کا ثبو ت  کسی بھی صحیح  حدیث  میں نہیں  ہے  ان  کے متعلق  دیلمی  اور امام  غزا لی  رحمۃ اللہ علیہ   نے جو  کچھ  لکھا  ہے وہ  سب  مو ضو ع  اور  خو د سا ختہ  ہے(تحفۃ الا حو ذی : 2/53)

بہر حا ل  اس کے متعلق  غنیۃ  الطا لبین  کے حو ا لے  سے جو کچھ  لکھا  گیا  ہے اس کا ثبو ت  صحیح  احا دیث  سے  نہیں ملتا ۔(واللہ اعلم )

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اصحاب الحدیث

ج1ص441

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)