فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 11779
(481) خلیفۂ برحق
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 17 May 2014 02:40 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

فیصل آباد  سے قاری  محمد  حبیب  اللہ  بسمل خریدا ری  نمبر 1448لکھتے ہیں  کہ ہما ر ے  ہا ں  آج  کل  نئے  گرو ہ  نے جنم  لیا ہے  جو  اپنے  ہا ں  ایک  خو د  سا ختہ   خلیفہ  سے بیعت  کر نے  کی دعو ت  دیتے  ہیں  آپ  سے استدعا  ہے  کہ خلیفہ  بر حق  کی علامتیں  اور شنا خت  سے  آگا ہ  فرمائیں  نیز  بتا ئیں کہ اس کا تعین  کیو نکر  ممکن  ہو سکتا  ہے ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

شرعی  خلیفہ  کے لیے  مندرجہ  ذیل  علا متو ں  کا ہو نا  ضروری  ہے ۔

(1)وہ قریشی  ہو بشرطیکہ  اخلا ص  کے سا تھ  اقا مت  دین  کے لیے سر گرم  عمل  ہو ۔

(2)جسما نی  اور علمی  طور  پر انتہا ئی  مضبو ط  ہو ۔

(3)اللہ کی حدود کو عملاً نا فذ  کر نے  کی اپنے  اندر  ہمت  رکھتا ہو ۔

(4) امر  با لمعرو ف  اور انہی  عن  المنکر  کا فر یضہ  ادا کر نے  میں با ختیا ر  ہو ۔

(5)امت  مسلمہ  نے  اسے  اپنے  ہا ں  شر ف  قبو لیت  سے نو از ا ہو یعنی  وہ سا ختہ  نہ ہو ۔ایسا  نہیں  کہ کسی  غیر  ملک  میں بیٹھ  کر وہ  سیا سی  پنا ہ  لے لے  اور وہا ں  اپنی  خلا فت  کا دعو یٰ کر دے  اور اپنے  قریشی  ہو نے   کا اعلا ن  کر کے  دیگر  مما لک  میں  حصول  بیعت  کے لیے  اپنے  نما ئند گا ن  مقرر  کر دے  تا کہ  بغا و ت  کی  فضا  سا ز گا ر  کی جا ئے  اور اس  کے مقرر  کر دہ  نمائندے  شہرو ں اور  دیہا تو ں  میں پھیل  جا ئیں  اور خو د  سا ختہ  خلیفہ  کی بیعت  لیتے  پھر یں  ہما ر ے  نز دیک  یہ کھلی بغا و ت  ہے  جس  کی شر یعت  ہمیں  اجا ز ت  نہیں  دیتی  حکو مت  وقت  کو چا ہے  کہ وہ  ایسے  لو گو ں  کا سختی  سے  نو ٹس  لے  ایسا  کر نا  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کے منھج اور طریقہ  کا ر  کے خلا ف ہے  ایسے  پر فتن  حا لا ت  میں زند گی  بسر  کر نے  کے لیے  ہمیں  رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کی تعلیما ت  سے  را ہنما ئی  ملتی  ہے  چنا نچہ  خضرت حذیفہ بن یمان رضی اللہ  تعالیٰ عنہا  کہتے ہےں  کہ رسو ل اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   نے فر ما یا :" کہ ایسے  حالا ت  میں مسلما نو ں  کی  جما عت  اور ان  کے امام  سے  چمٹے  رہنا  چا ہیے  حضرت  حذیفہ  رضی اللہ  تعالیٰ عنہا  فر ما تے  ہیں  کہ اگر  مسلما نو ں  کی جما عت  اور ان  کا امام  نہ ہو  تو  کیا  کیا جا ئے ؟آپ  صلی اللہ علیہ وسلم  نے فر ما یا کہ ایسے  حا لا ت  میں تمام  فر قو ں  سے الگ  رہنا  خو اہ  تمہیں جنگل  میں درختو ں  کی جڑیں  چبا  کر  ہی گز را اوقا ت  کر نا   پڑے  تا آنکہ  تمہیں  اسی حا لت  میں مو ت  آجا ئے(صحیح  بخا ر ی : کتا ب  النعتن)

حدیث  میں ہے  کہ جب  عبد  اللہ بن  زیا د رضی اللہ  تعالیٰ عنہ اور مروان  بن  حکم  نے شا م  میں  حضرت  عبد اللہ بن زبیر  رضی اللہ  تعالیٰ عنہ   نے  مکہ  مکرمہ  میں  اور  خو راج  نے بصر ہ میں اپنی  اپنی  حکو متوں  کا اعلا ن  کیا  تو ابو  الحمہنا ل  اپنے  با پ  کے ہمرا ہ  حضرت  ابو  برز ہ اسلمی  رضی اللہ  تعالیٰ عنہ   کے پا س  گئے  میرے  با پ  نے ان  سے عرض  کیا  اے  ابو  برزہ ! آپ  نہیں  دیکھتے  کہ لو گ  کس قسم  کے اختلا ف  میں  الجھے  ہو ئے  ہیں  ایسے  حا لا ت  میں ہمیں  کیا کر نا  چا ہیے ۔ آپ  نے فر ما یا  کہ  میں قر یش  کے لو گو ں  سے نا را ض  ہو ں  اور میر ی  نا را ضی  اللہ  کی رضا  کے لیے  ہے  اور مجھے  اس نا را ضی  پر اللہ  تعا لیٰ  سے اجر  ملنے  کی امید  ہے ۔عر ب کے لو گو ! تم  جا نتے  ہو کہ  تمہا را  پہلے  کیا حا ل  تھا  تم  سب  گمرا ہی  میں گر  فتا  تھے  اللہ نے  تمہیں  دین  اسلا م  اور رسول اللہ  اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کی تعلیما ت  کے ذریعے  اس  بر ی  حا لت  سے نجا ت  دی  پھر  تم  مقا م  عزت  پر  فا ئز  ہو گئے  آج  تمہیں  اس دنیا  نے خرا ب  کر دیا  ہے یہ سب  بز عم  خو یش  خلفا  دنیا  کے لیے  آپس  میں درست  و گر یبا ن  ہیں  اور ایک  دوسرے  سے قتا ل  کر رہے  ہیں ۔(صحیح  بخا ری  : النغتن7112)

ان احا دیث  سے معلو م  ہو اکہ  آج  ہمیں  کتا ب و سنت  کے مطا بق  زند گی  بسر  کر نا  چا ہیے  جب  کبھی  حا لا ت  سا ز گا ر  ہو جا ئیں  کہ کتا ب  و سنت  کے علمبر  دا ر  با ہمی  اتحا د  و اتفا ق  سے کسی  با ختیا ر خلیفہ  پر  متفق  ہو جا ئیں  تو اس کی بیعت  کے لیے  تحر یک  چلا نا  منا سب  اور  با عث  اجر  و ثو اب  لیکن  کسی  خو د  سا ختہ  خلیفہ جس کے متعلق ہمیں کو ئی علم نہیں  اور نہ  ہی کسی  نے اسے  دیکھا  ہے اس  کی خلا فت  کے  لیے  بیعت  لینا  فضا  سا ز گا ر  کر نا  اور  تحر یک  چلا نا  حکو مت  وقت  کے خلا ف  ایک  کھلی  بغا و ت  ہے  جس  کی شر یعت  ہمیں  اجا ز ت  نہیں  دیتی ۔(واللہ اعلم بالصواب )

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اصحاب الحدیث

ج1ص438

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)