فتاویٰ جات: تعلیم وتعلم
فتویٰ نمبر : 11768
(473) ’الحماد‘ کا معنی
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 17 May 2014 02:05 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کرا چی  سے  ابو عمر  سوال کر تے  ہیں  کہ الحما د کا کیا معنی  ہے  اور آپ  اسے   اپنے نا م  کے آگے  کیو ں لکھتے ہیں ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

اس سوال کا تعلق  عملی  زند گی  سے نہیں  ہے تا ہم  اس کا جو اب  پیش  خد مت  ہے الحما د  کا معنی  کثرت  سے اللہ  کی تعریف  کر نے والا  ہے  اگر چہ  راقم  آثم  کثرت  سے اللہ تعالیٰ  کی تعر یف  نہیں کر تا  اس امید  پر اس  لقب  کو اختیا ر  کیا گیا  ہے کہ اللہ تعا لیٰ  مجھے  ایسا  کر نے  کی تو فیق  دے  اسے  بطو ر  لقب  اختیا ر  کر نے  کی اصل  وجہ یہ ہے  کہ تو را ت  میں اس  امت  کا صفا تی  نا م  "الحما د  ون  بتا یا گیا  ہے جیسا کہ حضرت  ابن عبا س  رضی اللہ  تعالیٰ عنہ   سے سوال  کر نے  پر کعب  احبا ر  نے  اس کی وضا حت  کی ہے ۔ (دارمی :1/61،حدیث نمبر 875)

رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کا ارشا د گرا می ہے  کہ اللہ تعا لیٰ  کے ہا ں  قیا مت  کے دن  اللہ  کے ہا ں  بہتر ین  بندے  "الحما دو ن  "ہیں  یعنی  جو اس  کی کثرت  سے تعریف  کر نے  وا لے  ہو گے ۔ (مسند  امام احمد :4/434)

بطو ر  تفا ؤ ل  اس لقب  :الحما د "  کو اختیا ر  کیا گیا ہے  قا رئین  کرا م  سے دعا  کی اپیل  ہے کہ  اللہ  تعالیٰ  ہمیں  اپنے  لقب  کی لا ج  رکھنے  کی تو فیق  دے (آمین )

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اصحاب الحدیث

ج1ص430

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)