فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 11761
(472) ’حمنہ‘ کا لغوی معنی
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 14 May 2014 04:51 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

پسرور سے شفیق الرحمن اسلم خریداری (ایجنسی)نمبر188لکھتے ہیں۔حمنہ کے لغوی معنی کیا ہیں کیا یہ نام اسلا می ہے بعض حضرات اس نام کوصحیح  خیال نہیں کرتے۔؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

عربی لغت کے اعتبا ر سے  ہر وہ چیز  جس  میں سیا ہ اور چھو ٹے  ہونے  کا وصف پا یا جا تا ہے  اس کی  تا نیت  حمنہ  ہے چنا نچہ  علا قہ  طا ئف  میں  پا ئے  جا نے  وا لی  سیا ہ  انگو رو ں  کی ایک  خا ص  قسم بڑے  سیا ہ  دانوں  میں چھو ٹے  سیا ہ  دا نے   سیا ہ  چیونٹی  جوں حیو انا ت  کے جسم  سے لگی  ہو ئی  چچڑی  کو عر بی  زبان  میں حمنہ  کہا جا تا ہے  اس وضا حت کے بعد  حمنہ  رضی اللہ  تعالیٰ عنہا  ایک جلیل القدر  صحا بیہ ہیں  جن  کے ذر یعے  استحا ضہ  کے متعدد  مسا ئل  سے اس  امت  کو معلو ما ت حا صل  ہو ئی ہیں  ان کی  ایک ہمشیرہ  حضرت زینب  بنت  حجش   رضی اللہ  تعالیٰ عنہا   رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کی اہلیہ  تھیں  جن کے نیک  اور  پا ر سا ہو نے  کی حضرت  عا ئشہ  رضی اللہ  تعالیٰ عنہا   نے گو اہی  دی ہے  اس بنا  پر کسی بچی کا نا م  حمنہ رکھا جا سکتا ہے  اس میں  شر عا ً  کو ئی قبا حت نہیں  ہے ایسے  نا مو ں  کے متعلق  لغو ی  کھو ج  لگا نا  تحصیل  لا حا صل  اور  بے سو د  ہے کیو نکہ ان کی معنو یت  ان کے حا ملین  کے کردار  میں  ہے جیسا  کہ حضرت  معا ویہ  رضی اللہ  تعالیٰ عنہ اور حضرت  عثما ن  رضی اللہ  تعالیٰ عنہ   کے متعلق  لغو ی  مفہو م  کی کرید  کر نا  درست  نہیں ہے  اگر چہ  رسو ل اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   نے حضرت  وحشی  رضی اللہ  تعالیٰ عنہ   کو نا م  اور کا م  کی وجہ  سے اپنی  نگا ہو ں  سے رو پو ش  رہنے  کی تلقین  فر ما ئی  تھی  لیکن  ہما ر ے  لیے  صحا بہ کرا م  کے متعلق  حسن  ظن  کا تقا ضا  یہی  ہے کہ ہم  اپنے  دلو ں  میں ان کے متعلق  محبت  اور الفت  کے جذبا ت  رکھیں  اور کسی  بھی پہلو  سے  ان  کے متعلق  نفر ت  کا اظہا ر  نہ  ہو  چو نکہ  حضرت  حمنہ  رضی اللہ  تعالیٰ عنہا حضرت عائشہ  رضی اللہ  تعالیٰ عنہا  پر تہمت  لگا نے  والو ں  میں شر یک  تھیں  اس لیے  کچھ  حضرات  اس نام  سے  تکدر محسو س  کر تے ہیں  ہما ر ے  نزدیک  ایسا  رویہ  درست  نہیں ہے  کیو نکہ  سزا  اور تو بہ  کے  متعلق  جر م  کی نو عیت  ختم  ہو جا تی  ہے ویسے  انسا ن  کے  نا م  کا اسکی  شخصیت  کے سا تھ  گہرا  تعلق  ہو تا ہے  اس کے اخلا ق و کرا دار  پر  بھی نا م  اثر  اندا ز  ہو تا ہے  نیز  قیا مت  کے دن  انسا ن  کو اس کے  نا م  مع  ولدیت  آواز دی جا ئے گی  اس لیے رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کا ارشا د گرا می  ہے :"  کہ  تم  اپنی اولا د کے لیے   اچھے  نا م  کا انتخا ب  کیا کرو ۔ (ابو داؤد:الادب ،4948)

اللہ تعا لیٰ کے ہا ں  پسندیدہ  نا م  وہ  ہیں  جن  میں  اللہ  یا رحمن  کے لیے  عبودیت  کا اظہا ر  ہو چنا نچہ  حد یث  میں ہے :" کہ اللہ تعا لیٰ  کو عبد اللہ  اور عبد الر حمن  نا م  بہت  پسند  ہیں ، (صحیح مسلم :15587)

اسی طرح وہ نا م  جن  میں بند ے  کی عبودیت  کا اللہ تعالیٰ  کی کسی بھی  صفت  کی طرف  انتسا ب  ہو جیسا  کہ عبد  السلا م   عبد  الر حیم  اور  عبد القدوس  وغیرہ  حضرا ت  انبیا ء  علیہ السلام  کے نا م  بھی اللہ  کے ہا ں  اچھے  نا م  ہیں حدیث  میں ہے  کہ رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   نے فر ما یا :" کہ اپنی  اولا د  کے لیے  انبیا ء  کے نا م  تجو یز  کیا کرو ۔ (ابو داؤد: الا دب  4950)

اسلاف  میں جو نیک  سیر ت  اور اچھے  کر دا ر  کے حا مل  لو گ  ہو ں  ان کے نا م  بھی  تجو یز  کیے  جا سکتے  ہیں  جیسا کہ رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کا ارشا د گرامی  ہے :" کہ تم  سے  پہلے  حضرات  انبیا ء  علیہ السلام   اور صا لحین  کے نا مو ں  کے مطا بق  اپنی  اولا د  کے نا م  رکھتے  تھے ۔(صحیح مسلم  :الا دب 5598)

ان حقا ئق  کے  پیش  نظر  حمنہ   ایک اسلا می  نا م  ہے  اور اپنی  بچیو ں  کا نا م  رکھنے  میں کو ئی  قبا حت  نہیں ہے ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اصحاب الحدیث

ج1ص429

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)