فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 11362
(178) کٹھن معاشی حالات کے پیش نظر مو ت مانگنا
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 24 April 2014 10:44 AM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

گو جرا نو ا لہ  سے محمد فا رو ق   نا گی  خریداری  نمبر3742لکھتے ہیں کہ  کیا اپنے  کٹھن  معا شی حا لا ت  کے پیش  نظر  مو ت  ما نگی  جا سکتی ہے ؟ وہ کیا چیزیں ہے  جن کا مر نے کے بعد  ثو اب  پہنچتا  رہتا ہے ؟ کتا ب  و سنت  کی رو شنی میں ان کا جوا ب  دیں۔؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

دنیا میں کیسے بھی کٹھن حا لا ت ہوں  کسی بھی  صورت  میں مو ت کی آرزو نہیں کر نا چا ہیے  حدیث  میں ہے  کہ ایک  دفعہ حضرت عبا س  رضی ا للہ تعالیٰ عنہ  نے بحا لت  مر ض  مو ت  کی تمنا  کی تو رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   نے فر ما یا :"اے چچا  جا ن ! مو ت کی تمنا مت کیجیے  کیو نکہ  اگر آپ نیک  ہیں  تو آپ بقیہ  زند گی میں مز ید  نیکیا ں  حا صل کر یں  گے  یہ آپ کے لیے بہتر  ہے اور آپ  اگر گنا ہ گا ر  ہیں  تو اپنے گنا ہوں سے تو بہ کر سکتے  ہیں تو آپ  کے لیے  بہتر  ہے لہذا آپ کسی  بھی صورت میں مو ت  کی تمنا  نہ کر یں ۔(مسند امام احمد :ج2ص339)

ایک دوسری حدیث  میں ہے  کہ رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   نے فر ما یا :"تم میں سے کو ئی بھی  اپنی  کسی  مصیبت  کے پیش  نظر  مو ت  کی تمنا  نہ  کر ے  اگر  اس کے بغیر  چا  رہ  نہ ہو  تو اس طرح  کہہ  لے اے اللہ !  مجھے اس وقت  تک  زندہ  رکھ  جب تک  میر ے  لیے  زند گی   بہتر ہے اور اس  وقت  مجھے  فوت  کر لینا  جب  میر ے  لیے  مر نا  بہتر  ہو ۔(صحیح بخا ری: الد عوت2351)

مر نے کے بعد  میت کو مندرجہ ذیل چیز وں  کا ثو اب  پہنچتا  رہتا ہے ۔اگر کوئی  اس کے حق  میں دعا  کرتا ہے تو میت اس سے بہرہ ور ہو تی  ہے بشرطیکہ  دعا  میں قبو لیت  کی  شرائط  مو جو  د  ہو ں  حدیث  میں ہے  کہ اگر  کوئی  بھی مسلما ن  اپنے  بھا ئی  کے لیے  غا ئبا نہ  دعا  کر تا  ہے تو  وہ ضرور  قبول   ہو تی  ہے اللہ  کی طرف  سے ایک فرشتہ تعینا ت  کر دیا  جا تا ہے جب وہ کسی کے لیے  دعا  ئے  خیر  کر تا ہے تو فر شتہ  اس پر آمین  کہتا ہے اور  اسے اللہ کے ہا ں اس کے  مثل  اجر  ملنے  کی دعا کر تا ہے ۔(مسند امام احمد  رحمۃ اللہ علیہ :ج6ص452)

میت کی نذر  پو ری کر نا :میت نے  اپنی  زندگی   میں کو ئی  نذر ما نی تھی  لیکن  اسے  پو راکیے بغیر  مو ت  آگئی  تو لوا حقین  کو چاہیے  کہ اسے  پو را  کر یں وہ نذر  خوا ہ  روزے  کی ہو یا حج  یا نماز ادا کر نے کی چنانچہ روز ے  کے متعلق  صحیح بخا ری 1952حج کے متعلق صحیح بخا ری :1852اور نماز کے متعلق  صحیح  بخا ری  تعلیقاً ۔با ب  من  ما ت  وعلیہ  نذر مطلق نذر کے  متعلق  بھی  حدیث  میں آیا ہے ۔(صحیح بخا ری :الایما ن  والنذ ور6698میت کی طرف سے قرض کی ادائیگی :رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  نے ایک شخص کو تا کید  کی تھی  کہ وہ  اپنے  فو ت  شدہ  بھا ئی کا قرض  ادا کر ے  کیو نکہ  وہ عد م  ادا ئیگی  کی وجہ سے  اللہ  کے ہا ں   محبو یں ہے ۔(مسند امام احمد رحمۃ اللہ علیہ :ج4ص136)

نیک اولاد جو بھی اچھے کا م کر ے گی  والدین  کو وفا ت کے بعد  اس کا فا ئدہ  پہنچتا  رہتا  ہے کیو نکہ  ارشا د  با ری تعا لیٰ  ہے : کہ انسا ن  کے لیے  وہ کچھ ہے جس کی اس نے  کو شش کی ۔(53/النجم:39)اور اولا د  بھی انسا ن  کی کو شش اور کما ئی  میں سے  ہے جیسا  کہ حدیث  میں  ہے ۔(دارمی:ج 2ص247)

صدقہ  جا ر یہ اوربا قیا ت   صالحا ت :حدیث  میں ہے  کہ جب انسا ن  فوت  ہو جا تا  ہے تو   تین  اعما ل  کے علا وہ  اس کے  تمام  اعما ل  منقطع  ہو جاتے  ہیں  یعنی  صدقہ  جا ریہ  ایسا  علم  جس  سے لو گ  فا ئدہ  اٹھا تے  ہو ں  اور نیک  اولا د  جو اس کے لیے  دعا  کر تی رہے  ۔(صحیح مسلم :الوصیۃ1631)

اس سلسلہ  میں ایک  جا مع  حد یث  بھی ہے  جسے حضرت  ابو ہریرہ  رضی ا للہ تعالیٰ عنہ  بیا ن کر تے ہیں  کہ رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   نے فر ما یا :" انسا ن  کو مو ت  کے بعد جو حسنا ت  اور  اعما ل  جا ری رہتے  ہیں  وہ  یہ ہیں  وہ علم  جس کی  اس نے  لو گو ں کو تعلیم  دی اور اس  کی خو ب  نشر و اشا عت  کی ، نیک  اولا د  جو اپنے  پیچھے  چھو ڑ  گیا ۔کسی کو قرآن مجید  بطو ر  عطیہ  دیا ۔مسجد   بنا کر  وقف کر دی

محتا ج اور ضرورت مند کو گھر بنا کر دیا  کسی غریب کے لیے پا نی کا بندوبست  کر دیا  وہ صدقہ جسے  اپنی  زندگی  اور صحت  میں نکالا اس کا ثو اب  بھی  مرنے  کے بعد   بد ستو ر پہنچتا  رہے گا ۔(ابن ما جہ ۔المقدمہ 242)

درج با لا  وجا حت  کے علا وہ  کچھ   چیز یں  لو گو ں  نے خو د ایجا د  کر رکھی  ہیں اور ایصا ل  ثوا ب  کے لیے انہیں  عمل میں لا یا  جا تا ہے  لیکن  وقت  اور مال کے ضیا ع  کے علا وہ کچھ ہاتھ  نہیں  آتا  مثلاً قل خوا نی  سا تو ا ں  چالیسوا ں  اور  بر سی  وغیر ہ  پر  قرآن خوانی  اور کھا نے  وغیرہ کا بندوبست ہو تا ہے اس کا میت  کو کچھ  فا ئدہ  نہیں  پہنچتا  کیو نکہ  اس کا  کتا ب  و سنت  میں کو ئی ثبو ت  نہیں  ہے

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اصحاب الحدیث

ج1ص176

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)