فتاویٰ جات: تعلیم وتعلم
فتویٰ نمبر : 11205
(10) " اگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نہ ہو تے تو میں کائنات کو پیدا ہی نہ کر تا" کہنا
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 14 April 2014 02:39 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کرا چی سے  محمد  رفیق  شا ہد  لکھتے ہیں  کہ بعض واعظین حضرات  عا م  طو ر  پر رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم   کی شا ن  بیا ن کر تے ہو ئے  بکثرت یہ بیا ن کرتے ہیں  کہ " اگر آپ  صلی اللہ علیہ وسلم   نہ ہو تے تو میں کائنات  کو پیدا  ہی نہ کر تا  ۔ بعض  علما  حضرات  کہتے  ہیں  کہ یہ حدیث  صحیح نہیں  ہے اس کے متعلق  وضا حت درکا ر ہے ۔


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

رسول اللہ  صلی اللہ علیہ وسلم  کی شا ن اور مرتبہ  کے متعلق  قرآن و حدیث  میں اس قدر  مستند  موا د مو جو د ہے کہ واعظین کے لئے  کافی  ہے لیکن  یہ حضرا ت  ایسی  با تیں  بیا ن کر نے  کے عا دی  ہیں جس  میں  کو ئی  انو کھا  پن  ہو مذ کو رہ   با لا  روایت  بھی  اسی قبیل  سے ہے عا م طو ر  پر غا لی  قسم کے  واعظین  اس قسم کی رو ایا ت  بیا ن  کر تے ہیں  حا لا نکہ  یہ روایت  بنا وٹی  اور خو د  سا ختہ  ہے اس کے متعلق  سر خیل  احنا ف  ملا  علی  قا دری  لکھتے ہیں کہ  یہ حدیث مو ضو ع ہے ۔ ( الا سرا ر المر فو عہ  :295)

لیکن اس روا یت کو مو ضو ع قرار دینے  کے با و جو د  کہتے ہیں  کہ اس کا معنی  صحیح ہے حضرت  ابن عبا س   رضی اللہ تعالیٰ عنہ  سے مر فو عاً دیلمی  نے اپنی تا لیف  مسند  الفردو س  میں سے اسے  بیا ن کیا ہے ۔(الاسرار المر  فو عہ

محدث  العصر  علا مہ  محمد  نا صر الدین  البا نی  رحمۃ اللہ علیہ  نے اس کا بہتر ین  جو اب دیا ہے فرما تے  ہیں  "کہ" محدث دیلمی  کی طرف  جو با ت  منسو ب  کی گئی ہے اس کے ثبوت  کے بعد ہی ا س کے معنی  کو صحیح  کہنے  کے متعلق  جز م کیا جا سکتا ہے  ۔اگر چہ  میں اس کی سند  پر  مطلع نہیں  ہو ا ہو ں  تا ہم مجھے  اس کے ضعیف ہو نے  میں کو ئی تر دو  نہیں ہے ۔ (الاحا دیث  الضعیفہ  : حدیث 282)

مسند دیلمی  شا ئع ہو چکی ہے  تلا ش  بسیا ر  کے با وجو د  ابن عبا س  رضی اللہ تعالیٰ عنہ  سے مرو ی  یہ حدیث   ہمیں  نہیں مل سکی  ۔ نیز  محدث  دیلمی  کی بیان کر دہ احادیث اکثر ضعیف  بلکہ  مو ضو ع  ہیں ۔ علا مہ سیو طہ  رحمۃ اللہ علیہ  نے ایک  طو یل روایت  بیا ن  کی ہے جس  کے آخر  میں الفا ظ  ہیں : اگر  میں :" آپ  صلی اللہ علیہ وسلم   نہ ہو تے  تو میں  دنیا کو  پیدا  نہ کر نا  اسے  بیا ن کر نے کے بعد لکھتے ہیں  کہ یہ روا یت بنا و ٹی ہے  اس کی سند میں  ابو السکین  ابرا ہیم  اور یحییٰ بصری  جیسے  ضعیف  راوی  ہیں جنہیں  محدثین  نے چگٓھو ڑ دیا  تھا  امام افلاس  کہتے ہیں  کہ یحیٰی بصری جھو ٹا  راوی  ہے جو خو د سا ختہ  احا دیث  بیا ن کرتا ہے (اللالی  المو ضو عہ : 1/272)

امام جو زی  رحمۃ اللہ علیہ  اس طویل  روا یت  کو بیا ن  کر نے  کے بعد  لکھتے ہیں  کہ اس روا یت کے خو د سا ختہ ہو نے میں  کو ئی شک نہیں ہے کیو نکہ  اس کی سند  میں ایسے  راوی ہیں جن کے متعلق  کو ئی اتا پتا  نہیں  ہے اور کچھ  ایسے  راو ی ہیں  جو ضعیف  ہیں اس کے بعد  یحیٰ  بصری  کے متعلق  امام  احمد  بن حنبل  رحمۃ اللہ علیہ  کا قو ل نقل  کیا ہے  کہ ہم نے یحیٰ بصر ی کی  بیا ن کر دہ  روا یا ت  کو جلا دیا تھا ۔(کتا ب المو ضو عا ت : 2/289)

امام  دارقطنی  رحمۃ اللہ علیہ    نے اس کے متعلق لکھا ہے  کہ یہ محدثین  کے ہاں  متروک  ہے مختصر  یہ ہے  کہ مذکو رہ  روا یت  بنا و ٹی  اور خو د  سا ختہ  ہے نیز  اس طرح  کی روا یا ت  حقیقت  حا ل کی وضا حت  کے لئے  تو بیا ن  کی جا سکتی  ہیں  لیکن  فضا ئل  او ر سیر ت  کے سلسلہ  میں ان  کا سہا را  لینا  ناجائز  اور حرا م  ہے  ہما ر ے  وا عظین   حضرا ت  کو اس  طرح  کی روا یا ت  بیا ن  کر نے  سے احترا ز  کر نا چا ہیے ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اصحاب الحدیث

ج1ص41

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)