فتاویٰ جات: متفرقات
فتویٰ نمبر : 10180
کو لو نیا کو بطور خو شبو استعمال کرنا
شروع از عبد الوحید ساجد بتاریخ : 18 February 2014 02:56 PM
السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

کو لو نیا کو بطو ر (میک اپ ) خو شبو استعما ل کر نے کے با ر ے میں کا فی بحث مبا حثہ ہو ا لہذا آپ سے گزا رش ہے کہ یہ فر ما ئیں اگر یہ خو شبو استعما ل کی ہو تو کیا وضو ء دو با رہ کر نا ہو گا یا صرف جسم کے حصے کو دھو یا جا ئے جہا ں یہ خو شبو لگی ہو ۔ ؟


الجواب بعون الوهاب بشرط صحة السؤال

وعلیکم السلام ورحمة اللہ وبرکاته!
الحمد لله، والصلاة والسلام علىٰ رسول الله، أما بعد!

کو لو نیا کی خو شبو سپرٹ سے خا لی نہیں ہو تی اور اطباء کے بقو ل یہ ایک نشہ آور ما دہ ہے لہذا اس کا استعما ل تر ک کر نا اور اس کی بجا ئے اس ما دہ سے پا ک خو شبو کا استعما ل کر نا واجب ہے لیکن اگر کسی نے یہ خوشبو استعمال کر لی ہو اس سے وضوء کر نا واجب نہیں اور نہ جسم کے اس حصے کو دھونا واجب ہے جہا ں یہ لگی ہو کیو نکہ اس کے نا پا ک ہو نے کی کو ئی دلیل نہیں ۔

ھذا ما عندی واللہ اعلم بالصواب

فتاویٰ اسلامیہ

ج1ص275

محدث فتویٰ


تبصرہ (0)
[Notice]: Undefined index: irsloading (cache/c62f257fe6ed43eb557019d638a0d780.php:75)